خواب سمندر پار دے

وکیپیڈیا توں
Jump to navigation Jump to search

شہزاد اسلم دی شاعری دی کتاب "خواب سمندر پار دے" وِچّوں انتخاب

غزل

کوئی سوُرج نواں،مدار نواں

اِس نویں لئی، کوئی دیار نواں


ٹَھنڈدِل وِّچ پوے نویں کوئی

ویرَیاں نوُں چڑھے بُخار نواں


عِشق دے اِس پُرانے جال لئی

حُسن کوئی نواں، شِکار نواں


کدتک ایہو بہار،ایہو خِزاں

مالک !اِس وار کجھ اتار نواں


کون ہویااے کول ہو کے پَرے

درد اُٹھیا اے پہلی وار نواں


جام وِچ عکس ہے اُہد ے مُکھ دا

ایویں اکھیاں چ نئیں خمار نواں


ہِجر وِّچ نئیں رہیامزا ہُن اوہ

تِیر دِل چوں کوئی گُزار نواں


اُٹھ رہے نے قدم ستاریاں وَل

سیر لئی،ہے نا!ایہ بزار نواں


واہ شہزادؔ ! جوڑ توڑ تِرے

اوہو اَکھر نیں ،پر نکھار نواں


غزل


ساہمنے جے تِرے سوا کوئی نئیں

دِل دے اَندر وی دُوسرا کوئی نئیں


کِتھّے دَر چھوڑ کے تِرا جائیے

کدھرے وی تے تِرے جہیا کوئی نئیں


اوس بے مثل دی اے دین ،اِیہ دَرد

دَرد وی اوہ، جِہدی دَوا کوئی نئیں


جلوہ تکیا اے تیرے حُسن دا مَیں

کسِ طرحاں کہہ دَوَاں خُدا کوئی نئیں


بول اوہ، دِل تِرا جو چاہندا اے

کیہ تِرا اَپنا فیصلا کوئی نئیں؟


ڈُھونڈ لینی پتنگیاں نیں شمع

کول بھاویں اَتا پَتا کوئی نئیں


جان والے لئی نہ رو شہزاد

کون ایتھے سَدا رہیا،کوئی نئیں

اِک ہارے ہوۓ ہیرو دے ناں


سر تے بھاویں رات کھڑی اے

دل نُوں فِروی آس بڑی اے


کیہ ہویا جے ہر گئےآں تے

جنگ تے آپنی آپ لڑی اے


سبھ نوُں جانا پَیندااِک دِن

کیہدی ایتھے توڑ چڑھی اے


کیہ سوچدی پئ ایں


دِل دی گّل نہ ٹال نی،کیہ سوچدی پئ ایں

اکھیاں ہویاں لال نی،کیہ سوچدی پئ ایں

عشق چ اپنا آپ گوا کے

اُچّیاں دے سنگ یاری لا کے

دنیاوانگ سوال نی،کیہ سوچدی پئ ایں

سجناں میلہ لایا ہویا

تُوں کیہ حال بنایا ہویا

اپنا آپ سمھال نی،کیہ سوچدی پئ ایں

نہ بہہ سوچاں کول نی کُڑئے

عشق تِرا انمول نی کُڑئے

مار چنھاں وچ چھال نی،کیہ سوچدی پئ ایں

پیار تے دُشمن داری دی گل


پیار تے دُشمن داری دی گل

ٹیلی فون تے چَس نئیں دیندی

اَکھ نال اَکھ ملا کے گل کر

ہِمّت کر۔۔۔تے آہمنے ساہمنے آ کے گل کر


پِنڈ دی اِک کُڑی


ہاڑ چ کِن مِن،

پوہ وچ دُھپ جہئ

جنھوں ویکھ کے

ہر بندے نُوں

لگ جاندی اِک وکھری چُپ جہئ

کَلّا بہہ کے ہر کوئ اوہدے ہجر چ رویا

ساریاں ساہمنے

ہر کوئ اُس توں لُکدا پِھردا

سہمیاں سہمیاں ڈریا ہویا

کیوں جے اوہ ہے

سارے پِنڈ دا سانجھا شیشا

اَت نموشی بَھریا ہویا

اَج وی


اَج وی بَندا

نِھیری اَگّے،

جَھکّھڑ اَگّے

تَن سَک دا اے

راہ دی

ہر مشکل دی آکڑ

بَھن سَک دا اے

دل وچ ہووے

تھوڑا جیہا خلوص

تے اَج وی

اِک بُوٹے توں

باغ بغیچہ بَن سَک دا اے


سَمَے دا سچ


روز دیہاڑے پاڑدا گلماں

روز دیہاڑے سِیندا

تک لَیندا سقراط جے تینوں

زہر کدے نہ پِیندا

ਬਰਫ਼ ਦੇ ਹੱਥ


ਸਾਡੇ ਹੱਥ ਬਰਾਫ ਦੇ ਸੱਜਣਾ

ਸੋਚ ਰਹੇ ਆਂ

ਖ਼ਵਰੇ ਲਿਖਦਿਆਂ ਲਿਖਦਿਆਂ

ਕਲਮ ਕਿਥੇ ਰੁਕ ਜਾਵੇ

ਦਿਲ ਦੀ ਦਿਲ ਵਿਚ ਰਹਿ ਜਾਵੇ। ...

ਤੇ ਹੱਥ ਮੁਕ ਜਾਵੇ

ਸ਼ਹਿਜ਼ਾਦ ਅਸਲਮ

شالا ایس دسمبر پِچّھوں


شالا ایس دسمبر پِچّھوں

خُشیاں اِنج دی جھومر پاوَن

اَؤندے جاندے ساہواں دے نال

بَدّھے ہوئے دُکھ کُھل جاوَن

سُکھ دے ہَڑھ وِچ رُہڑ جاوے دل

تے دل چوں سُکھ ڈُلھ ڈُلھ جاوَن

ویلے دے سُنّے مَتّھے تے

گیت اجہیاں ڈلھکاں مارَن

سانوں غزلاں بُھل بُھل جاوَن


دُنیا اینی سوہنی ہو جائے

کدھرے بُھل کے سوں جائیے تے

سُتیاں ہویاں ساڈیاں اَکّھاں

سفنیاں وِچ وی کُھل کُھل جاوَن


شالا ایس دسمبر پِچّھوں

ایہ دُنیا مَن موہنی ہو جائے

سوچ توں ودھ کے سوہنی ہو جائے

غزلاں ساڈے مگروں لہہ جان

گیتاں ہَتّھوں بوہنی ہو جائے

ਦਿਲਾਸਾ


ਨਾ ਕਹਿ ਦਿਲ ਤੋਂ ਭਾਰ ਹਿਜਰ ਦੇ ਲਹਿਣੇ ਨਾਹੀਂ ।

ਵਿਛੜੇ ਹੋਏ ਕਦੀ ਵੀ ਰਿਲ ਮਿਲ ਬਹਿਣੇ ਨਾਹੀਂ ।

ਝੂਠੇ ਲੋਕੀਂ ਕਦ ਤਕ

ਸੱਚੇ ਪਿਆਰ ਦਾ ਰਸਤਾ ਰੁਕਣਗੇ

ਸਦਾ ਤੇ ਸੱਚ ਦੀ ਆਖ ਇਹ ਮੰਜ਼ਰ ਸੋਹਣੇ ਨਾਹੀਂ


ਰੋ ਰੋ ਅੱਖੀਆਂ ਨਮ ਨਾ ਕਰ

ਤੇ ਗ਼ਮ ਨਾ ਕਰ

ਜੇ ਉਹ ਦਿਨ ਨਹੀਂ ਰਹੇ

ਤੇ ਇਹ ਵੀ ਰਹਿਣੇ ਨਾਹੀਂ ।

دُنیا میریاں راہواں ویکھے، میں راہ ویکھاں تیری

میں دُنیا لئی چَن، تُوں سُورج، تُوں رُشنائی میری

میں کیوں نہ مُنہ نِت اِس دل دا یاد تِری وَل رَکّھاں

ویکھ گلاب دے پُھل وَل تَکدِیاں کِنج کنڈیاں دِیاں اَکّھاں

پیار دی گَل دَس پیاریا کد تک، سُنی سنائی جائیے

کد تَک پانی پانی کہہ کہہ پیاس ودھائی جائیے

ویکھیں کِنج سواہ ہُندی ہے جِندڑی لمّے دُکھ دی

بال تے سہی اِک واری ساہمنے شمع اپنے مُکھ دی


ਸ਼ਹਿਰ ਕੀ ਆ ਗਿਆ ਦਿਲ ਬਣ ਠਣ ਕੇ ।

ਰਹਿ ਗਿਆ ਸ਼ੌਕ ਤਮਾਸ਼ਾ ਬਣ ਕੇ ।


ਨੀਵੀਂ ਪਾ ਕੇ ਨਈਂ ਜੀਣਾ ਸਿਖਿਆ

ਵੈਰੀਆਂ ਅੱਗੇ ਰਹੇ ਹਾਂ ਤਣ ਕੇ ।


ਸਾਡੀ ਮਿੱਟੀ ਚ ਬਗ਼ਾਵਤ ਸੀ ਬੜੀ

ਤੇਰਾ ਕੁਝ ਦੋਸ਼ ਨਈਂ ਸੀ ਕਣਕੇ ।


ਤਕ ਕੇ ਉਸ ਹੁਸਨ ਨੂੰ, ਮੈਂ ਕਿਧਰੇ ਹਾਂ

ਕਿਧਰੇ ਧਾਗੇ ਨੇ ਤੇ ਕਿਧਰੇ ਮਣਕੇ


ਸ਼ੌਹ ਨਜ਼ਰ ਆਇਆ ਤੇ ਸ਼ਹਿਜ਼ਾਦ ਅਸਲਮ

ਕਿਤੇ ਘੁੰਗਰੂ ਤੇ ਕਿਤੇ ਦਿਲ ਛਣਕੇ ।

ਸ਼ਹਿਜ਼ਾਦ ਅਸਲਮ


شہر کیہ آ گیا دل بَن ٹَھن کے

رہ گیا شوق تماشا بَن کے


نِیوِیں پا کے نہیں جِینا سِکھیا

وَیرِیاں اَگّے رہے ہاں تَن کے


ساڈی مِٹّی چ بغاوت سی بڑی

تیرا کجھ دوش نئیں سی کَنکے


تَک کے اُس حسن نُوں، میں کدھرے ہاں

کدھرے دھاگے نیں تے کدھرے مَنکے


شوہ نظر آیا تے شہزاد اسلم

کِتے گھنگرو تے کِتے دِل چھنکے

ਲਵ ਇਜ਼ ਨੌਟ ਆ ਪਾਰਟ ਟਾਈਮ ਜੌਬ


ਕਿਸਤਾਂ ਦੇ ਵਿਚ ਲੱਭਣ ਵਾਲਿਆ

ਪੂਰੇ ਪਿਆਰ ਦੀ ਸ਼ਕਤੀ

ਪਿਆਰ ਕੋਈ ਜੁਜ਼ ਵਕਤੀ ਕੰਮ ਨਹੀਂ

ਪਿਆਰ ਤੇ ਹੈ ਕੁਲ ਵਕਤੀ


ਇਸ ਤੋਂ ਹਟ ਕੇ ਹਰ ਕੰਮ ਨਫਲੀ

ਇਹ ਕੰਮ ਹਰ ਦਮ ਫਰਜ਼ ਈ

ਮੰਨਿਆ ਕਰ...ਮਨਵਾਇਆ ਨਾ ਕਰ

ਛੱਡ ਦੇ ਇਹ ਖੁਦ ਗ਼ਰਜ਼ੀ

ਜੇ ਮਨਜ਼ੂਰ ਕਰਾਉਣੀ ਏੰ ਤੂੰ

ਆਪਣੇ ਪਿਆਰ ਦੀ ਅਰਜ਼ੀ


ਸਾਡਾ ਕੰਮ ਸਮਝਾ ਦੇਣਾ ਸੀ

ਅੱਗੇ ਤੇਰੀ ਮਰਜ਼ੀ


ਸ਼ਹਿਜ਼ਾਦ ਅਸਲਮ

ਸਮੇ ਦਾ ਸੱਚ


ਰੋਜ਼ ਦਿਹਾੜੇ ਪਾੜ ਦਾ ਗਲਮਾ

ਰੋਜ਼ ਦਿਹਾੜੇ ਸੀਂਦਾ

ਤਕ ਲੈਂਦਾ ਸੋਕਰਾਤ ਜੇ ਤੈਨੂੰ

ਜ਼ਹਿਰ ਕਦੇ ਨਾ ਪੀਂਦਾ

کھٹن گیا، کماؤن گیا ______________


بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا چانن

ساڈا بھاویں ککھ نہ رهوے

ساڈے بال حیاتیاں مانن

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا لاری

اُترن چڑھن پئے

سبھ آپو اپنی واری

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا ڈَھگّے

ڈَھگّے پِچھے رہ گئے

تے لنگھ گئے ٹریکٹر اَگّے

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا کُجھ ناں

ہاں نُوں اڈیکدیا

کدے نظراں دی گل وی بُجھ ناں

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا دھاگے

سنگلاں دی لوڑ کوئی نہ

جے پیار رَکھے دل لاگے

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا چِٹّھی

اوہ ہئو کسراں دا

جہدی چِٹّھی ہے شہد توں مِٹّھی

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا حیلہ

عشق ناں اکھ مِلی

تے رنگ پے گیا نیلا

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا مُورت

مُورت ویکھ لئی

ہُن یار وکھا جا صُورت

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا کلیاں

کلیاں دی فکر کرو

خشبوواں تے اُڈ چَلیاں

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا لوئی

دنیا توں بَچ کے رہویں

ایہ کدے نہ کِسے دی ہوئی

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا یاداں

میرا کدے وَس جے چَلے

تے میں چن تے چکور پچاداں

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا کھاداں

دھرتی تیہائی وِلکے

سُکی نہر کرے فریاداں

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا باتاں

درشن منگیا سی

مِلے کاغذ، قلم، دواتاں

بارھیں برسیں کھٹن گیا

تے کھٹ کے لیایا بُندے

ہَس ہَس مِلن والے

ایڈے دل دے چنگے نئیں ہُندے