دریائے ہوانگ ہو

آزاد انسائیکلوپیڈیا، وکیپیڈیا توں
(پیلا دریا توں مڑجوڑ)
دریائے ہوانگ ہو
 

لمبا‏ئی 5464 کلومیٹر  ویکی ڈیٹا اُتے (P2043) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
نقشہ 36°07′27″N 116°05′52″E / 36.124194444444°N 116.09766666667°E / 36.124194444444; 116.09766666667  ویکی ڈیٹا اُتے (P625) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
 
نقشہ

انتظامی تقسیم
ملک چین  ویکی ڈیٹا اُتے (P17) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن[۱]
وقوع تھاں صوبہ چنگھائی،  سوجوان،  گانسو،  ننگزیا،  اندرآلا منگولیا،  شانسی،  شنگزی،  ہینان،  شانڈونگ  ویکی ڈیٹا اُتے (P131) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
ڈگدا بحیرہ بوہای  ویکی ڈیٹا اُتے (P403) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
معاون دریا ویئی دریا  ویکی ڈیٹا اُتے (P974) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
طاس دیس
ڈسچارج
2571 cubic metre per second  ویکی ڈیٹا اُتے (P2225) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
طاس رقبہ
تقسیم اعلیٰ صوبہ چنگھائی،  سوجوان،  گانسو،  ننگزیا،  اندرآلا منگولیا،  شانسی،  شنگزی،  ہینان،  شانڈونگ  ویکی ڈیٹا اُتے (P131) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
متناسقات 36°07′27″N 116°05′52″E / 36.124194444444°N 116.09766666667°E / 36.124194444444; 116.09766666667  ویکی ڈیٹا اُتے (P625) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن[۲]
جیو رمز 1807482  ویکی ڈیٹا اُتے (P1566) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
پیلا دریا یاں دریائے ہوانگ ہو چین دا دوجا تے جگ دا ستواں سب توں وڈا دریا اے ، جس دی لمبائی ۴۸۴۵ کلومیٹر اے ۔ چڑھدےاوں لہندے اس دا طاس ۱۹۰۰ کلومیٹر تے اتروں دکھن ۱۱۰۰ کلومیٹر اے ۔ ا س دے طاس دا کل کھیتر ول(رقبہ)۷٬۵۲٬۴۴۳ مربع کلومیٹر اے ۔

اس دریا نوں اس دے پانی چ بوت زیادہ مٹی دی وجہ توں زرد دریا آکھئیا جاندا اے تے ایہ جگ دا سب توں زیادہ مٹی آلا دریا اے تے ہر منٹ چ ایہہ سینکڑاں ٹن مٹی سمندر چ سٹدا اے ۔ تریخ چ کئی واری اے دریا دے کنڈےآں چ شگاف پئے ، جنہاں نال تریخ دے بدترین ہڑ آئے تے لکھاں لوک مارے گئے ۔

ہوانگ ہو یا پیلا دریا یانگسی دے بعد چین دا دوسرا سب تو‏ں طویل دریا اے تے دنیا دا چھٹا سب تو‏ں لمبا دریا اے جس د‏‏ی لمبائی 5,464 کلومیٹر ا‏‏ے۔ اے [1] مغربی چین دے صوبہ چنگھائی دے بیان ہار پہاڑاں تو‏ں شروع ہوݨ والا ایہ دریا چین دے نو صوبےآں تو‏ں گزر کر بحیرہ بوہائی وچ جا گردا ا‏‏ے۔ اس د‏ی خلیج دا مشرق مغرب توسیع 1,100 کلومیٹر ا‏‏ے۔ (1,180 میݪ) تے 1,100 کلومیٹر د‏‏ی شمال جنوب د‏‏ی توسیع۔ (684 میݪ)۔ اس دے علاقے دا کل رقبہ 742,443 مربع کلومیٹر ا‏‏ے۔ اے

دریائے پیلا یا ہوانگ ہی (چینی:黄河، Mandarin : Huáng hé [xwǎŋ xɤ̌] ( سناں ) ) چین دا دوسرا طویل ترین دریا اے ، [2] دریائے یانگسی دے بعد ، تے دنیا دا چھٹا طویل ترین دریا ا‏‏ے۔ 5,464 کلومیٹر (3,395 میݪ) د‏‏ی تخمینی لمبائی اُتے ۔ [3] مغربی چین دے صوبہ چنگھائی وچ بیان ہار پہاڑاں تو‏ں نکلدا اے ، ایہ نو صوبےآں تو‏ں گزردا اے، تے ایہ بحیرہ بوہائی وچ جا گردا اے ۔شیڈونگ صوبے وچ ڈونگینگ شہر دے نیڑے ۔ دریائے زرد دا طاس تقریباً 1,900 کلومیٹر (1,180 میݪ) د‏‏ی مشرق-مغربی حد تے شمال-جنوب د‏‏ی حد تقریباً 1,100 کلومیٹر (680 میݪ) اُتے مشتمل ا‏‏ے۔ اس دا کل نکاسی دا رقبہ تقریباً 795,000 مربع کلومیٹر (307,000 مربع میݪ) ا‏‏ے۔

دریائے زرد دا طاس قدیم چینیاں د‏ی جم تھاں سی ، تے توسیع دے لحاظ تو‏ں، مشرق بعید د‏‏ی رہتل، [4] تے ایہ ابتدائی چینی تریخ دا سب تو‏ں خوشحال خطہ سی ۔ ایتھ‏ے اکثر تباہ کن سیلاب آندے نيں تے دریا دے کنارے د‏‏ی مسلسل بلندی تو‏ں پیدا ہوݨ والی تبدیلیاں ، بعض اوقات اس دے آس پاس دے کھیت دے کھیتاں د‏‏ی سطح تو‏ں وی اُتے ہُندیاں نيں۔

ناں[سودھو]

ابتدائی چینی ادب بشمول یو گونگ یا یو ٹریبیوٹ آف یو جنگجو ریاستاں دے دور ( 475–221 ق م) تو‏ں مراد دریائے زرد نو‏‏ں صرف河( پرانا چینی : *C.gˤaj ، [5] جدید بیجنگ مینڈارن : / xɤ̌ / یا pinyin Hé وچ )، اک ایسا کردار جو جدید استعمال وچ "دریا" دے معنی وچ آیا ا‏‏ے۔ ناں د‏‏ی ابتدائی تصدیق黃河( مشرقی ہان چینی : *ɣuaŋ-gɑi ؛ [6] مشرق چینی : ہوانگ ہا [5] ) مشرقی ہان وچ مقالہ کانگکونگزی _ _ _ _ _ [8] صفت "پیلا" دریا دے نچلے حصے وچ چِکڑ والے پانی دے بارہماسی رنگ نو‏‏ں بیان کردا اے، جو مٹی ( لوس ) دے تھلے د‏‏ی طرف لے جانے تو‏ں پیدا ہُندا ا‏‏ے۔ [9] اس دا پیلا رنگ تے چین وچ مرکزی حیثیت روايتی بنیادی سمتاں تو‏ں وابستہ اے ۔

اس دے پرانے منگول ناواں وچو‏ں اک "سیاہ دریا" سی، [۳] کیونجے دریا لوس مرتفع وچ داخل ہوݨ تو‏ں پہلے صاف ہو جاندا اے، لیکن اندرونی منگولیناں وچ دریا دا موجودہ ناں Ȟatan Gol ( Хатан гол , "رانی دریا") اے ۔ . [11] خود منگولیا وچ ، اسنو‏ں صرف Šar Mörön ( Шар мөрөн ، "زرد دریا") کہیا جاندا ا‏‏ے۔ </ref> In Mongolia itself, it is simply called the Šar Mörön (Шар мөрөн, "Yellow River").[۴] کل ٹیگین اسٹیل وچ دریا دا ذکر "سبز دریا" دے طور اُتے کيتا گیا اے ( پرانا ترک : yašïl ügüz , 𐰖𐱁𐰞𐰽𐰺𐰍)۔ [۵]


چنگھائی وچ ، دریا دا تبتی ناں "میور دا دریا" اے ( تبتی : རྨ ་ ཆུ , Wylie : rma.chu , THL : Ma Chu ; آسان چینی :玛曲; روايتی چینی :瑪曲; پنین : Mǔ )

تریخ[سودھو]

پیلے دریا کی تہذیب مرکزی مضمون: دریائے زرد تہذیب حرکیات

دی یلو ریور بریچز اپنے کورس بذریعہ ما یوآن (1160-1225، گانا خاندان )۔ دریا میں طغیانی لاکھوں اموات کی وجہ بنی ہوئی ہے۔ پیلا دریا پہلی بار 56 ملین اور 34 ملین سال پہلے Eocene عہد کے دوران تشکیل دیا گیا تھا، [9] جب کہ واقف شکل تقریباً 7 ہزار سال پہلے ظاہر ہوئی تھی۔ [۶] while the familiar shape appeared around 7 thousand years ago.[۶]

یہ دریا طویل عرصے سے شمالی چین کی ترقی کے لیے اہم رہا ہے، اور علماء اسے تہذیب کا ایک گہوارہ مانتے ہیں ۔ دریا کے سیلاب نے بھی بہت زیادہ تباہی مچائی ہے، جس میں متعدد سیلاب بھی شامل ہیں جن کے نتیجے میں 10 لاکھ سے زائد افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ سب سے مہلک ترین سیلابوں میں یوآن خاندان کے دوران 1332–33 کا سیلاب ، چنگ خاندان کے دوران 1887 کا سیلاب جس میں 900,000 سے لے کر 20 لاکھ افراد ہلاک ہوئے، اور جمہوریہ چین کے دور میں 1931 کا سیلاب ( اس سال سیلاب کی ایک بڑی تعداد کا حصہ ) جس میں 1 سے 4 ملین لوگ مارے گئے۔ [۷]

سیلاب کی وجہ لوئس پلیٹیو سے دریا کے ذریعے لے جانے والے باریک دانوں کی بڑی مقدار ہے ، جو اس کے چینل کے نچلے حصے میں مسلسل جمع ہوتی رہتی ہے۔ تلچھٹ کی وجہ سے قدرتی ڈیم آہستہ آہستہ جمع ہوجاتے ہیں۔ یہ ذیلی ڈیم غیر متوقع اور عام طور پر ناقابل شناخت ہیں۔ بالآخر، پانی کی بہت زیادہ مقدار کو سمندر کے لیے ایک نیا راستہ تلاش کرنے کی ضرورت ہے، اور اسے کم سے کم مزاحمت کا راستہ اختیار کرنے پر مجبور کرنا پڑتا ہے ۔ جب ایسا ہوتا ہے، تو یہ فلیٹ شمالی چائنا کے میدانی علاقے میں پھٹ جاتا ہے، کبھی کبھی ایک نیا چینل لے کر اپنے راستے میں زیادہ تر کھیتوں، شہروں یا قصبوں کو ڈوب جاتا ہے۔

کناروں کے ساتھ اونچی اور اونچی سطحیں تعمیر کرنے کے روایتی چینی ردعمل نے بعض اوقات سیلاب کی شدت میں بھی حصہ ڈالا: جب سیلابی پانی سطحوں سے ٹوٹ جاتا تھا، تو وہ دوبارہ دریا کے بستر میں نہیں جا سکتا تھا جیسا کہ یہ عام سیلاب کے بعد ہوتا ہے، جیسا کہ دریا کا بیڈ کبھی کبھی آس پاس کے دیہی علاقوں سے اونچا ہوتا تھا۔ ان تبدیلیوں کی وجہ سے دریا کا منہ زیادہ سے زیادہ 480 کلومیٹر (300 میل) تک منتقل ہو سکتا ہے، جو کبھی شیڈونگ جزیرہ نما کے شمال میں سمندر تک پہنچ جاتا ہے اور کبھی جنوب میں۔ [15]

تباہ کن سیلابوں کا ایک اور تاریخی ذریعہ اندرونی منگولیا میں اپ اسٹریم آئس ڈیموں کا ٹوٹ جانا ہے جس کے ساتھ اچانک پانی کی بڑی مقدار کا اخراج ہوتا ہے۔ پچھلی صدی میں اس طرح کے 11 بڑے سیلاب آئے ہیں، جن میں سے ہر ایک نے جان و مال کا زبردست نقصان کیا ہے۔ آج کل، ہوائی جہاز سے گرائے جانے والے دھماکہ خیز مواد کو برف کے ڈیموں کو خطرناک بننے سے پہلے توڑنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ [۸]

چین میں جدید ڈیموں کے نمودار ہونے سے پہلے دریائے زرد سیلاب کا بہت زیادہ شکار ہوا کرتا تھا۔ 595 قبل مسیح سے 1946 عیسوی تک کے 2,540 سالوں میں، دریائے زرد میں 1,593 مرتبہ سیلاب آیا، جس نے اپنا راستہ 26 مرتبہ نمایاں طور پر اور نو مرتبہ شدید طور پر تبدیل کیا۔ [17] ان سیلابوں میں اب تک ریکارڈ کی گئی چند مہلک ترین قدرتی آفات شامل ہیں۔ جدید ڈیزاسٹر منیجمنٹ سے پہلے، جب سیلاب آتا تھا، کچھ آبادی ابتدائی طور پر ڈوبنے سے مر جاتی تھی اور بہت سے لوگ بعد میں آنے والے قحط اور بیماریوں کے پھیلاؤ کا شکار ہوتے تھے۔ [۹]

زمانہ قدیم[سودھو]

زرد دریا جیسا کہ چنگ خاندان کے ایک تصویری نقشے میں دکھایا گیا ہے (حصوں)
دریائے زرد کے تاریخی کورسز
دریائے زرد کے تاریخی کورسز


چینی افسانوں میں ، دیو کووا فو نے سورج کا تعاقب کرتے ہوئے اپنی جلتی ہوئی پیاس بجھانے کے لیے دریائے زرد اور دریائے وی کو بہا دیا۔ [19] بہار اور خزاں کے دور [20] اور کن خاندان [21] کی تاریخی دستاویزات سے پتہ چلتا ہے کہ اس وقت دریائے زرد اپنے موجودہ راستے سے کافی حد تک شمال میں بہتا تھا۔ ان اکاؤنٹس سے پتہ چلتا ہے کہ دریا لوویانگ سے گزرنے کے بعد، یہ شانسی اور ہینان صوبوں کے درمیان سرحد کے ساتھ بہتا تھا ، پھر بوہائی بے میں خالی ہونے سے پہلے ہیبی اور شیڈونگ کے درمیان سرحد کے ساتھ ساتھ جاری رہا۔موجودہ دور کے تیانجن کے قریب ۔ ایک اور آؤٹ لیٹ نے بنیادی طور پر موجودہ کورس کی پیروی کی۔ [۱۰] and Qin dynasty[۱۱]

دریا نے یہ راستے 602 قبل مسیح میں چھوڑے اور کئی سو کلومیٹر مشرق کی طرف منتقل ہو گئے۔ [20] [22] متحارب ریاستوں کے دور میں ڈیکس، نہروں اور آبی ذخائر کی توڑ پھوڑ اور حریف ریاستوں کا جان بوجھ کر سیلاب ایک معیاری فوجی حربہ بن گیا ۔ [23] چونکہ دریائے زرد کی وادی گوانژونگ کے علاقے اور شمالی چائنا کے میدان سے ریاست کن میں داخل ہونے کا سب سے بڑا راستہ تھا، کن نے ہنگو پاس کو بہت زیادہ مضبوط بنایا ۔ اس نے متعدد لڑائیاں دیکھی اور ہان کے دارالحکومتوں چانگان اور لوئیانگ کی حفاظت کرنے والا ایک اہم چوکی بھی تھا۔. 11 عیسوی میں آنے والے بڑے سیلاب کو قلیل مدتی زن خاندان کے زوال کا سہرا دیا جاتا ہے ، اور 70 عیسوی میں ایک اور سیلاب نے شیڈونگ کے شمال میں دریا کو بنیادی طور پر اپنے موجودہ راستے پر لوٹا دیا۔ [۱۰][۱۲]

قرون وسطی کے زمانے[سودھو]

پین جیکسن کے دریا کی بحالی کا جائزہ کے سیکو کوانشو ایڈیشن میں سیزو اور منگ زولنگ کے آس پاس کا دریائے پیلا اور ہوائی ۔ چنگ ایرا ایڈیشن کے وقت تک ، دونوں 1680 کے سیلاب کے دوران مکمل طور پر ضائع ہو چکے تھے۔

تیسری صدی کے آغاز سے ہی، درہ ہنگو کی اہمیت کم ہو گئی، بڑے قلعے اور فوجی اڈے اوپریور ٹونگ گوان منتقل ہو گئے ۔ AD 923 میں، مایوس بعد میں لیانگ جنرل ڈوان ننگ نے ایک بار پھر ڈیکس کو توڑ دیا، 1,000 مربع میل (2,600 کلومیٹر 2 ) کا سیلاب لے کر بعد میں تانگ سے اپنے دائرے کے دارالحکومت کو بچانے کی ناکام کوشش میں ۔ مرکزی میدانی علاقوں کو خیتائی سے بچانے کے لیے دریا کے نچلے حصوں میں سیلاب سے متعلق سونگ انجینئر لی چون کی اسی طرح کی تجویز کو 1020 میں رد کر دیا گیا: چنیوان معاہدہدونوں ریاستوں کے درمیان سونگ کو نئی کھائیاں قائم کرنے یا دریا کے راستے تبدیل کرنے سے واضح طور پر منع کر دیا گیا تھا۔ [۱۳]

خلاف ورزیاں بے پرواہ ہوئیں: 1034 میں ہینگ لونگ میں ایک نے کورس کو تین حصوں میں تقسیم کیا اور بار بار ڈیزو اور بوزو کے شمالی علاقوں میں سیلاب آ گیا ۔ [24] گانے نے پچھلے کورس کو بحال کرنے کی ناکام کوشش کرتے ہوئے پانچ سال تک کام کیا – 35,000 ملازمین، 100,000 بھرتیوں، اور 220,000 ٹن لکڑی اور بانس ایک ہی سال میں استعمال کیے [24] – 1041 میں اس منصوبے کو ترک کرنے سے پہلے۔ زیادہ سست ۔ اس کے بعد دریا نے شنگھو کے مقام پر ایک شگاف ڈالا جس نے 1048 میں مین آؤٹ لیٹ شمال کو تیانجن کی طرف بھیج دیا [۱۳] – before abandoning the project in 1041. The more sluggish river then occasioned a breach at Shanghu that sent the main outlet north towards Tianjin in 1048[۱۴]

1128 میں، کیفینگ کے گورنر ڈو چونگ (杜充, Dù Chōng , d. 1141) کے ماتحت سونگ فوجیوں نے آگے بڑھنے والی جن فوج کو روکنے کی کوشش میں دریائے پیلے کے جنوبی کنارے کو توڑا ۔ اس کے نتیجے میں بڑے دریا کے اخراج نے پیلے رنگ کو سی اور دریائے ہوائی کی دیگر معاون ندیوں پر قبضہ کرنے کی اجازت دی ۔ [25] ریکارڈ شدہ تاریخ میں پہلی بار، دریائے زرد مکمل طور پر شیڈونگ جزیرہ نما کے جنوب میں منتقل ہوا اور بحیرہ زرد میں بہہ گیا ۔ 1194 تک ہوائی کا منہ بند ہو چکا تھا۔ [26]گاد کے ذخائر کی تعمیر اس طرح تھی کہ بعد میں دریائے زرد کے اپنا راستہ تبدیل کرنے کے بعد بھی، ہوا اپنے تاریخی راستے کے ساتھ بہہ نہیں سکتا تھا، بلکہ اس کے بجائے، اس کا پانی ہونگزے جھیل میں جاتا ہے اور پھر جنوب کی طرف دریائے یانگسی کی طرف بہتا ہے ۔ [27]

1344 میں ایک سیلاب شیڈونگ کے جنوب میں دریائے پیلا لوٹ آیا۔ یوآن خاندان ختم ہو رہا تھا، اور شہنشاہ نے زبردست ٹیموں کو دریا کے لیے نئے پشتے بنانے پر مجبور کیا۔ خوفناک حالات نے بغاوتوں کو ہوا دینے میں مدد کی جس کی وجہ سے منگ خاندان کا قیام عمل میں آیا ۔ [15] 1391 میں جب دریا کا سیلاب آنہوئی میں کیفینگ سے فینگ یانگ تک آیا تو یہ راستہ دوبارہ بدل گیا ۔ اسے بالآخر خواجہ سرا لی زنگ نے 1494 کے سیلاب کے بعد عوامی کام کے منصوبوں کے دوران مستحکم کیا تھا ۔ [28] 16ویں صدی میں دریا میں کئی بار سیلاب آیا، بشمول 1526، 1534، 1558، اور 1587۔ ہر سیلاب نے دریا کے زیریں راستے کو متاثر کیا۔ </ref> The buildup of silt deposits was such that even after the Yellow River later shifted its course, the Huai could no longer flow along its historic course, but instead, its water pools into Hongze Lake and then runs southward toward the Yangtze River.[۱۵]

1642 کا سیلاب انسانوں کا بنایا ہوا تھا، جس کی وجہ کیفینگ کے منگ گورنر کی جانب سے لی زیچینگ کے ماتحت کسان باغیوں کو تباہ کرنے کے لیے دریا کا استعمال کرنے کی کوشش کی وجہ سے ہوا جو گزشتہ چھ ماہ سے شہر کا محاصرہ کر رہے تھے۔ [29] اس نے اپنے آدمیوں کو ہدایت کی کہ وہ باغیوں کو سیلاب سے دوچار کرنے کی کوشش میں ڈیکوں کو توڑ دیں، لیکن اس کے بجائے اپنے ہی شہر کو تباہ کر دیا: سیلاب اور اس کے نتیجے میں آنے والے قحط اور طاعون نے شہر کی سابقہ ​​378,000 آبادی میں سے 300,000 افراد کو ہلاک کرنے کا اندازہ لگایا ہے۔ [30] ایک زمانے کا خوشحال شہر چنگ خاندان میں کانگسی شہنشاہ کے تحت اس کی تعمیر نو تک تقریباً ترک کر دیا گیا تھا ۔

یہ سوال کہ سیلاب کو کس طرح جارحانہ طریقے سے کنٹرول کیا جانا چاہیے، اور کیا اسے ہجرت کے وقت اپنے اصلی راستوں پر واپس لایا جانا چاہیے، شاہی عدالت میں ایک تنازعہ کا موضوع تھا۔ حریف گروہوں نے بجٹ، تکنیکی اور تزویراتی معیار پر مبنی دلائل دیے۔ جغرافیہ دان چارلس گریر نے دو مسابقتی مکاتب فکر کی نشاندہی کی ہے کہ پیلے دریا کو کیسے کنٹرول کیا جائے۔ ایک، جسے وہ کنفیوشس کے طور پر شناخت کرتا ہے، اس نے دریا کو اونچی سطحوں کے درمیان رکھنے کی وکالت کی، اس طرح دریا کے طاس کی زمین کی زیادہ سے زیادہ مقدار جو کاشت کی جا سکتی ہے۔ دوسرا، جسے وہ تاؤ ازم کے ساتھ جوڑتا ہے، 5-10 کلومیٹر تک الگ ہونے والی نچلی سطحوں کی حمایت کرتا ہے۔ [31] رینزونگ اور شینزونگ کے 11ویں صدی کے دور حکومت کے دوران ایک خاص طویل بحث میںشہنشاہوں، جب دریا نے بار بار اپنی سطح کو توڑا اور شمال اور مغرب کی طرف ہجرت کی، تو حکام اس بات پر لڑ پڑے کہ آیا دریا کو اس کے سابقہ ​​راستوں پر واپس لانے کے لیے مہنگے اقدامات کیے جائیں۔ شینزونگ شہنشاہ نے بالآخر حکم دیا کہ دریا کو اپنے نئے راستے پر رہنے دیا جائے۔ [۱۶]

سیلاب پر قابو پانے کی روایتی تکنیکوں میں لیویز ، پانی کی توانائی کو جذب کرنے کے لیے ریوٹمنٹ ، اوور فلو بیسنز، نکاسی آب کی نہروں اور پولڈرز کا استعمال کیا جاتا ہے ۔ [33] سیلاب پر قابو پانے کی روایتی تکنیکوں پر ٹریٹیز پین جیکسن جیسے حکام نے لکھے تھے ، [34] جنہوں نے دلیل دی کہ دریا کی شاخوں میں شامل ہونے سے پانی کی طاقت میں اضافہ ہوتا ہے اور اس کے نتیجے میں اس کی تلچھٹ کو بہانے کی صلاحیت میں اضافہ ہوتا ہے۔ [35] دریائے زرد، ہوائی اور گرینڈ کینال کے سنگم کے ارد گرد مشکل صورتحال، تاہم، پھر بھی علاقائی مرکز سیزہو کے ایک بڑے سیلاب کا باعث بنی۔اور پین کی عدالت سے برخاستگی۔ اس کے بعد، دریا کے 1680 کے سیلاب نے سیزو اور قریبی منگ زولنگ کے مقبروں کو ہونگز جھیل کے نیچے صدیوں تک مکمل طور پر غرق کر دیا جب تک کہ جدید آبپاشی اور سیلاب کے کنٹرول نے پانی کی سطح کو کافی کم کر دیا تاکہ ان کی کھدائی اور مقبروں کی بحالی کی اجازت دی جا سکے۔

حالیہ وقت[سودھو]

1938 میں دریائے زرد کے سیلاب کے دوران چینی نیشنلسٹ آرمی کے سپاہی۔.

1851 اور 1855 کے درمیان ، [۱۴][۱۷][۱۶] دریائے زرد سیلاب کے درمیان شمال کی طرف لوٹ آیا جس نے نیین اور تائپنگ کی بغاوتوں کو بھڑکا دیا ۔ 1887 کے سیلاب میں 900,000 اور 2 ملین کے درمیان لوگوں کی ہلاکت کا تخمینہ لگایا گیا ہے، [36] اور یہ تاریخ کی دوسری بدترین قدرتی آفت ہے (قحط اور وبائی امراض کو چھوڑ کر)۔ پیلے دریا نے کم و بیش اپنا موجودہ راستہ 1897 کے سیلاب کے دوران اپنایا تھا ۔[۱۷][۱۸]

1931 کے سیلاب نے ایک اندازے کے مطابق 1,000,000 سے 4,000,000 لوگوں کو ہلاک کیا، [36] اور یہ ریکارڈ کی گئی بدترین قدرتی آفت ہے (قحط اور وبائی امراض کو چھوڑ کر)۔

9 جون 1938 کو، دوسری چین-جاپانی جنگ کے دوران ، چیانگ کائی شیک کے ماتحت قوم پرست فوجیوں نے ہینان کے گاؤں Huayuankou کے قریب دریا کو روکے ہوئے لیویز کو توڑ دیا ، جس کی وجہ سے کینیڈین مورخ، ڈیانا لیری نے اسے "جنگ" کہا ہے۔ - قدرتی آفت کی حوصلہ افزائی" آپریشن کا مقصد "پانی کو فوجیوں کے متبادل کے طور پر استعمال کرنے" کی حکمت عملی پر عمل کرتے ہوئے آگے بڑھتے ہوئے جاپانی فوجیوں کو روکنا تھا ( yishui daibing )۔ 54,000 کلومیٹر 2 (20,800 مربع میل) پر محیط علاقے کے 1938 کے سیلاب نے جاپانی فوجیوں کی نامعلوم تعداد کے ساتھ تقریباً 500,000 سے 900,000 چینیوں کی جانیں لے لیں۔ سیلاب نے جاپانی فوج کو لینے سے روک دیا۔ ژینگزو ، دریائے پیلے کے جنوبی کنارے پر، لیکن اس نے انہیں ووہان پر قبضہ کرنے کے اپنے مقصد تک پہنچنے سے نہیں روکا ، جو چینی حکومت کی عارضی نشست تھی اور دریائے یانگسی کو گھیرے ہوئے تھی ۔ [۱۹]

جغرافیہ[سودھو]

اس حصے کو تصدیق کے لیے اضافی حوالوں کی ضرورت ہے ۔ براہ کرم قابل اعتماد ذرائع کے حوالہ جات شامل کرکے اس مضمون کو بہتر بنانے میں مدد کریں ۔ غیر منبع مواد کو چیلنج کیا جا سکتا ہے اور ہٹا دیا جا سکتا ہے۔ ( مئی 2009 ) ( جانیں کہ اس سانچے کے پیغام کو کیسے اور کب ہٹانا ہے )

زوگی کاؤنٹی ، سیچوان.
گائیڈ کاؤنٹی ، تبتی سطح مرتفع میں چنگھائی ، لوئس سطح مرتفع سے اوپر کی طرف ۔

چائنا ایکسپلوریشن اینڈ ریسرچ سوسائٹی کے مطابق، [39] دریائے زرد کا منبع 34°29′31″N 96°20′25″E پر یوشو تبتی خود مختار پریفیکچر کے مشرقی کنارے کے قریب بیان ہار پہاڑوں میں ہے ۔ منبع کی معاون ندیاں چنگھائی کے بیان ہار پہاڑوں میں گولوگ پریفیکچر کے مغربی کنارے پر گیارنگ جھیل اور نگورنگ جھیل میں بہتی ہیں ۔ گانسو کے ساتھ حدود کے ساتھ زوئیج بیسن میں ، دریائے زرد جنوب کا رخ کرنے سے پہلے شمال مغرب اور پھر شمال مشرق کی طرف لوٹتا ہے، جس سے " اورڈوس لوپ " بنتا ہے، اور پھر عام طور پر مشرق کی طرف بہتا ہے۔ شمالی چائنا کا میدان خلیج بوہائی تک ، 752,443 مربع کلومیٹر (290,520 مربع میل) کا ایک طاس نکالتا ہے جو 140 ملین لوگوں کو پینے کے پانی اور آبپاشی کے ساتھ پرورش کرتا ہے۔ [۲۰]

دریائے زرد موجودہ دور کے سات صوبوں اور دو خود مختار علاقوں سے گزرتا ہے ، یعنی (مغرب سے مشرق تک) چنگھائی ، سچوان ، گانسو ، ننگزیا ، اندرونی منگولیا ، شانسی ، شانسی ، ہینان اور شان ڈونگ ۔ دریائے زرد کے موجودہ راستے کے ساتھ بڑے شہروں میں (مغرب سے مشرق تک) لانژو ، ینچوان ، ووہائی ، باؤتو ، لوویانگ ، ژینگ زو ، کیفینگ اور جنان شامل ہیں۔. دریائے زرد کا موجودہ منہ کینلی کاؤنٹی ، شیڈونگ میں واقع ہے۔

دریا کو عام طور پر تین مراحل میں تقسیم کیا جاتا ہے۔ یہ تقریباً پہاڑی تبتی سطح مرتفع کے شمال مشرق میں ہیں ، اورڈوس لوپ اور لوس سطح مرتفع ، اور شمالی چین کا میدان ۔ [41] تاہم، تین مراحل کو کس طرح تقسیم کیا جاتا ہے اس پر مختلف علماء کی مختلف آراء ہیں۔ [ حوالہ درکار ] یہ مضمون بنیادی طور پر اس تقسیم کو اپناتا ہے جسے ییلو ریور کنزروینسی کمیشن استعمال کرتا ہے ۔ [۲۱]

دریائے زرد سے نکلنے والے تلچھٹ کو بحیرہ بوہائی سے باہر لے جایا گیا ہے، تمام راستے شمالی زرد سمندر اور جنوبی زرد سمندر تک، اور شیڈونگ جزیرہ نما کے ارد گرد ایک ڈسٹل ڈیپو سینٹر بنایا گیا ہے۔ [۲۲]

اوپری پہنچ[سودھو]

یہ سیکشن کسی ذرائع کا حوالہ نہیں دیتا ۔ براہ کرم قابل اعتماد ذرائع میں حوالہ جات شامل کرکے اس حصے کو بہتر بنانے میں مدد کریں ۔ غیر منبع شدہ مواد کو چیلنج اور ہٹایا جا سکتا ہے ۔ ( ستمبر 2015 ) ( جانیں کہ اس ٹیمپلیٹ پیغام کو کیسے اور کب ہٹانا ہے )

Near Xunhua, Qinghai.
Liujiaxia, Gansu.

دریائے زرد کے اوپری حصے ایک حصے کی تشکیل کرتے ہیں جو اس کے منبع سے بایان ہار پہاڑوں میں شروع ہوتا ہے اور ہیکو ٹاؤن ( توگتو کاؤنٹی )، اندرونی منگولیا پر ختم ہوتا ہے اس سے پہلے کہ یہ تیزی سے جنوب کی طرف مڑتا ہے۔ اس حصے کی کل لمبائی 3,472 کلومیٹر (2,157 میل) ہے اور بیسن کا کل رقبہ 386,000 مربع کلومیٹر (149,000 مربع میل) ہے، جو بیسن کے کل رقبے کا 51.4% ہے۔ اس لمبائی کے ساتھ، دریائے زرد کی بلندی 3,496 میٹر (11,470 فٹ) گر جاتی ہے، جس کا اوسط درجہ 0.10% ہے۔

منبع کا حصہ بنیادی طور پر چراگاہوں، دلدلوں، اور بایان ہار پہاڑوں اور چنگھائی میں انیماقن ( آمنی مشین ) پہاڑوں کے درمیان سے گزرتا ہے ۔ دریا کا پانی صاف ہے اور مسلسل بہہ رہا ہے۔ کرسٹل صاف جھیلیں اس حصے کی خصوصیت ہیں۔ اس حصے کے ساتھ دو اہم جھیلیں جھیل گیارنگ (Zhaling) اور جھیل Ngoring (Eling) ہیں، جن کی صلاحیت بالترتیب 4.7 بلین اور 10.8 بلین میٹر 3 (166 اور 381 بلین فٹ 3 ) ہے۔ سطح سمندر سے 4,290 میٹر (14,070 فٹ)) سے زیادہ بلندی پر یہ ملک بھر میں سطح مرتفع میٹھے پانی کی دو سب سے بڑی جھیلیں ہیں۔ دریائے زرد کے منبع علاقے میں زمین کی ایک قابل ذکر مقدار کو بطور نامزد کیا گیا ہے۔سانجیانگ یوان ("تین دریاؤں کے ذرائع") نیشنل نیچر ریزرو، دریائے زرد، یانگسی اور میکونگ کے منبع علاقے کی حفاظت کے لیے ۔

آمنے ماچن پہاڑوں کے مشرقی کنارے پر مشرق کی طرف بہتا ہوا، پیلا دریا گانسو کی ماکو کاؤنٹی میں داخل ہوتا ہے ۔ یہاں، دریا اونچائی والے پیٹ بوگ سے گزرتا ہے جسے Zoigê Wetlands کے نام سے جانا جاتا ہے اور شمال مغرب کی طرف ایک تیز موڑ لیتا ہے جو Sichuan میں Maqu اور Zoigê کاؤنٹی کے درمیان سرحد بناتا ہے ۔ امنے مشین کے شمالی کنارے کے ساتھ اب بہتا ہوا، دریا چنگھائی میں دوبارہ داخل ہوتا ہے اور دھیرے دھیرے شمال کی طرف شنگھائی میں لونگ یانگ گھاٹی کی طرف مڑتا ہے ۔

وادی کا حصہ چنگھائی میں لونگ یانگ گھاٹی سے گانسو میں چنگ ٹونگ گھاٹی تک پھیلا ہوا ہے۔ دریا کے دونوں طرف کھڑی چٹانیں ہیں۔ پانی کا بستر تنگ ہے اور اوسط قطرہ بڑا ہے، اس لیے اس حصے میں بہاؤ انتہائی ہنگامہ خیز اور تیز ہے۔ اس حصے میں 20 گھاٹیاں ہیں، جن میں سے سب سے مشہور لونگ یانگ ، جیشی، لیوجیا ، باپن اور چنگ ٹونگ گھاٹیاں ہیں۔ اس حصے میں بہاؤ کی صورتحال اسے پن بجلی کے پلانٹس کے لیے بہترین مقام بناتی ہے ۔ پیلا دریا ان گھاٹیوں میں دوسری اور آخری بار چنگھائی سے نکلتا ہے اور لیوجیا گھاٹی سے ٹھیک پہلے دوسری بار گانسو میں داخل ہوتا ہے۔ لانژو کے صوبائی دارالحکومت یانگو گورج سے بہاودریائے زرد کے کنارے پر بنایا گیا ہے۔ پیلا دریا گانسو سے شمال مشرق کی طرف بہتا ہے اور چنگ ٹونگ گھاٹی سے پہلے ننگزیا میں بہتا ہے۔

چنگ ٹونگ گھاٹی سے نکلنے کے بعد، دریا وسیع اللووی میدانوں کے ایک حصے میں آتا ہے ، ینچوان میدان اور ہیٹاؤ میدان ۔ اس حصے میں، دریا کے ساتھ والے علاقے زیادہ تر صحرائی اور گھاس کے میدان ہیں ، جن میں بہت کم معاون دریا ہیں۔ بہاؤ سست ہے۔ ہیٹاؤ میدان کی لمبائی 900 کلومیٹر (560 میل) اور چوڑائی 30 سے ​​50 کلومیٹر (19 سے 31 میل) ہے۔ یہ تاریخی طور پر دریائے زرد کے کنارے آبپاشی کا سب سے اہم میدان ہے۔

درمیانی پہنچ[سودھو]

لانژو ، گانسو میں
شاپوتو ، ننگزیا میں
Qiankun bend in Yonghe County
لویانگ ، ہینن میں


اورڈوس لوپ دریائے زرد کے ایک بہت بڑے موڑ سے تشکیل دیا گیا ہے، جو ننگزیا کی ژونگنگ کاؤنٹی سے شروع ہوتا ہے اور شانسی میں ٹونگ گوان میں وی کے ساتھ اپنے سنگم پر مشرق کی طرف سخت موڑ کے ساتھ ختم ہوتا ہے ۔ تاہم، دریا کے درمیانی راستوں کے لیے باضابطہ ڈویژن توگتو کاؤنٹی ، اندرونی منگولیا میں ہیکو سے لے کر ژینگ زو ، ہینان تک چلتی ہے۔. درمیانی رسائی 1,206 کلومیٹر (749 میل) لمبی ہے، جس کا بیسن رقبہ 344,000 مربع کلومیٹر (133,000 مربع میل) ہے، کل کا 45.7%، مجموعی بلندی میں 890 میٹر (2,920 فٹ) کی اوسط کمی کے ساتھ % درمیانی رسائی کے ساتھ ساتھ 30 بڑی معاون ندیاں ہیں، اور اس مرحلے پر پانی کے بہاؤ میں 43.5 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ درمیانی رسائی دریا کی گاد میں 92 فیصد حصہ ڈالتی ہے۔

دریائے زرد کا درمیانی دھارا لوئس سطح مرتفع سے گزرتا ہے ، جہاں کافی کٹاؤ ہوتا ہے۔ دریا میں بڑی مقدار میں کیچڑ اور ریت خارج ہونے سے دریائے زرد دنیا کا سب سے زیادہ تلچھٹ سے بھرا دریا بناتا ہے۔ دریائے زرد میں خارج ہونے والی سلٹ کی سب سے زیادہ ریکارڈ شدہ سالانہ سطح 1933 میں 3.91 بلین ٹن تھی۔ 1977 میں سب سے زیادہ گاد کی ارتکاز کی سطح 920 kg/m 3 (57.4 lb/ft 3 ) ریکارڈ کی گئی۔ یہ تلچھٹ بعد میں دریا کے نچلے حصے میں جمع ہو کر دریا کے بستر کو بلند کرتے ہیں۔اور مشہور "زمین کے اوپر دریا" بنانا۔ ہیکو سے یومینکو تک، دریا اپنے مرکزی راستے پر مسلسل وادیوں کی طویل ترین سیریز سے گزرتا ہے، جسے اجتماعی طور پر وادی جنشان کہا جاتا ہے۔ اس حصے میں ذخیرہ شدہ وافر ہائیڈروڈینامک وسائل اسے پن بجلی گھروں کی تعمیر کے لیے دوسرا موزوں ترین علاقہ بناتے ہیں۔ مشہور Hukou آبشار شانسی اور شانسی کی سرحد پر اس وادی کے نچلے حصے میں ہے ۔

نچلی پہنچ[سودھو]

نچلے حصے میں، ژینگژو ، ہینان سے اس کے منہ تک، 786 کلومیٹر (488 میل) کی دوری پر، دریا بحیرہ بوہائی میں خالی ہونے سے پہلے شمالی چائنا کے میدان کے پار شمال مشرق کی طرف بہتا ہے . اس مرحلے میں طاس کا رقبہ صرف 23,000 مربع کلومیٹر (8,900 مربع میل) ہے، جو کہ کل کا محض 3% ہے، کیونکہ چند معاون ندیاں اس مرحلے میں بہاؤ میں اضافہ کرتی ہیں۔ جنوب کی طرف تقریباً تمام دریا دریائے ہوائی میں گرتے ہیں ، جب کہ شمال کی جانب سے دریائے ہائی میں گرتے ہیں ۔ مثال کے طور پر ہوائی دریائے طاس کو دریائے زرد کے جنوب کی طرف سے دریائے زرد بیسن سے الگ کیا گیا ہے۔ [44]نچلے حصوں کی بلندی میں کل کمی 93.6 میٹر (307 فٹ) ہے، جس کا اوسط درجہ 0.012% ہے۔

درمیان سے حاصل ہونے والی مٹی یہاں پر تلچھٹ کی شکل میں پہنچتی ہے، جو دریا کی تہہ کو بلند کرتی ہے۔ ضرورت سے زیادہ تلچھٹ کے ذخائر نے دریا کے کنارے کو ارد گرد کی زمین سے کئی میٹر بلند کر دیا ہے۔ کیفینگ ، ہینن میں ، دریائے زرد سطح زمین سے 10 میٹر (33 فٹ) بلند ہے۔ [۲۳]

معاون دریا[سودھو]

دریائے ڈیکسیا کا منہ (نیچے دائیں طرف سے آتا ہے)، لنشیا پریفیکچر ، گانسو میں دریائے زرد کے لیوجیاکسیا ریزروائر میں بہتا ہے۔

دریائے زرد کی معاونتیں جو اس کے منبع سے اس کے منہ تک درج ہیں ان میں شامل ہیں:

سفید ندی
دریائے ڈیکسیا
دریائے تاؤ
ہوانگ شوئی
دریائے ڈیٹونگ
دریائے زوانگ لانگ
دریائے زولی
دریائے چنگشوئی
دریائے داہی
دریائے کوئے ۔
دریائے ووڈنگ
دریائے فین
دریائے وی (دریائے وی ان معاون ندیوں میں سب سے بڑا ہے)
دریائے لوو
دریائے کن
دریائے داوین


خصوصیات[سودھو]

اس حصے کو تصدیق کے لیے اضافی حوالوں کی ضرورت ہے ۔ براہ کرم قابل اعتماد ذرائع کے حوالہ جات شامل کرکے اس مضمون کو بہتر بنانے میں مدد کریں ۔ غیر منبع مواد کو چیلنج کیا جا سکتا ہے اور ہٹا دیا جا سکتا ہے۔ ( مئی 2009 ) ( جانیں کہ اس سانچے کے پیغام کو کیسے اور کب ہٹانا ہے )

دریائے زرد ڈیلٹا کی توسیع 1989 سے 2009 تک پانچ سال کے وقفوں میں۔.
دریائے پیلا ڈیلٹا

دریائے زرد اس کی بڑی مقدار میں گاد کے لیے قابل ذکر ہے — 1.6 بلین ٹن سالانہ اس مقام پر جہاں یہ لوس پلیٹیو سے نیچے آتا ہے ۔ اگر یہ کافی حجم کے ساتھ سمندر کی طرف چل رہا ہے، تو ہر سال 1.4 بلین ٹن سمندر میں لے جایا جاتا ہے۔ ایک تخمینہ 34 کلو گرام گاد فی مکعب میٹر دیتا ہے جب کہ کولوراڈو کے لیے 10 اور دریائے نیل کے لیے 1 ۔ [17]

اس کا اوسط اخراج 2,110 مکعب میٹر فی سیکنڈ (یانگسی کے لیے 32,000) بتایا جاتا ہے، جس میں زیادہ سے زیادہ 25,000 اور کم از کم 245 ہے۔ تاہم، 1972 کے بعد سے، یہ اکثر سمندر تک پہنچنے سے پہلے خشک ہو جاتا ہے۔ کم حجم زرعی آبپاشی میں اضافے کی وجہ سے ہے ، جس میں 1950 کے بعد سے پانچ کا اضافہ ہوا ہے۔ 1999 تک دریا سے ہٹائے جانے والے پانی نے 140 ملین لوگوں کی خدمت کی اور 74,000 کلومیٹر 2 (48,572 mi 2 ) زمین کو سیراب کیا۔ [40] دریائے زرد کا ڈیلٹا کل 8,000 مربع کلومیٹر (3,090 mi 2 ) ہے۔ تاہم، سمندر تک پہنچنے والی گاد میں کمی کے ساتھ، یہ 1996 سے ہر سال کٹاؤ کے ذریعے تھوڑا سا سکڑنے کی اطلاع ہے۔ [۲۴]

سب سے زیادہ مقدار بارش کے موسم میں جولائی سے اکتوبر تک ہوتی ہے، جب دریا کے سالانہ حجم کا 60% بہتا ہے۔ مارچ اور جون کے درمیان آبپاشی کی زیادہ سے زیادہ مانگ کی ضرورت ہوتی ہے۔ ضرورت کے وقت اضافی پانی کو استعمال کرنے کے لیے اور سیلاب پر قابو پانے اور بجلی پیدا کرنے کے لیے کئی ڈیم بنائے گئے ہیں، لیکن زیادہ گاد کے بوجھ کی وجہ سے ان کی متوقع زندگی محدود ہے۔ ایک مجوزہ جنوبی-شمالی پانی کی منتقلی کے منصوبے میں دریائے یانگسی سے پانی کا رخ موڑنے کے لیے کئی اسکیمیں شامل ہیں : ایک دریاؤں کے مغربی ہیڈ واٹر میں جہاں وہ ایک دوسرے کے قریب ہیں، دوسرا ہان ندی کے اوپری حصے سے ، اور تیسرا پرانی گرینڈ کینال کا راستہ [ حوالہ درکار ]

گاد کے اپنے بھاری بھرکم ہونے کی وجہ سے دریائے زرد ایک ذخیرہ کرنے والی ندی ہے - یعنی یہ اپنے اٹھائے ہوئے مٹی کے بوجھ کا کچھ حصہ اپنے بستر میں اس جگہ پر جمع کرتا ہے جہاں یہ آہستہ سے بہہ رہا ہے۔ یہ ذخائر ندی کے کنارے کو بلند کرتے ہیں جو اس کے نچلے حصے میں قدرتی لیویز کے درمیان بہتا ہے۔ سیلاب آنے کی صورت میں، دریا لیویز سے نکل کر آس پاس کے نچلے سیلابی میدان میں داخل ہو سکتا ہے اور ایک نیا چینل لے سکتا ہے۔ تاریخی طور پر ایسا ہر سو سال میں ایک بار ہوا ہے۔ جدید دور میں لیویز کو مضبوط بنانے اور سیلاب پر قابو پانے کے لیے کافی کوششیں کی گئی ہیں۔ [ حوالہ درکار ]

پن بجلی کے ڈیم[سودھو]

لیوجیاکسیا ڈیم ، گانسو
سانمینکسیا ڈیم ، ہینن

ذیل میں دریائے زرد پر بنائے گئے ہائیڈرو الیکٹرک پاور اسٹیشنوں کی فہرست دی گئی ہے ، جو آپریشن کے پہلے سال کے مطابق ترتیب دی گئی ہیں (بریکٹ میں):

سانمینکسیا ڈیم (1960؛ سانمینکسیا ، ہینن)
سنشینگ گونگ ڈیم (1966)
چنگ ٹونگ گورج ہائیڈرو الیکٹرک پاور اسٹیشن (1968؛ چنگٹونگشیا ، ننگزیا)
Liujiaxia Dam (Liujia Gorge) (1974؛ Yongjing County , Gansu)
لیجیکسیا ڈیم (1997) ( جینکا کاؤنٹی ، چنگھائی)
یانگوکسیا ڈیم (یانگو گورج) پن بجلی گھر (1975؛ یونگجنگ کاؤنٹی، گانسو)
تیانقیاؤ ڈیم (1977)
Bapanxia Dam (Bapan Gorge) (1980؛ Xigu ڈسٹرکٹ ، Lanzhou ، Gansu)
لونگ یانگشیا ڈیم (1992؛ گونگھے کاؤنٹی ، چنگھائی)
دا گورج ہائیڈرو الیکٹرک پاور اسٹیشن (1998)
لی گورج ہائیڈرو الیکٹرک پاور اسٹیشن (1999)
وانجیازہائی ڈیم (1999؛ پیانگوان کاؤنٹی ، شانسی اور اندرونی منگولیا)
Xiaolangdi Dam (2001) ( Jiyuan , Henan)
لکسیوا ڈیم (2010) ( گائیڈ کاؤنٹی ، چنگھائی)
یانگکو ڈیم (2016) ( زنگھائی کاؤنٹی ، چنگھائی)
Maerdang Dam (2018) ( Maqên County , Qinghai)
جیسا کہ 2000 میں رپورٹ کیا گیا ہے، 7 سب سے بڑے ہائیڈرو پاور پلانٹس (Longyangxia، Lijiaxia، Liujiaxia، Yanguoxia، Bapanxia، Daxia اور Qinglongxia) کی کل نصب صلاحیت 5,618 میگاواٹ تھی۔ [۲۵]

کراسنگ[سودھو]

دریائے زرد کے کنارے بڑے شہر

[[File:Yellow river pontoon bridge jinan 2008 05.jpg|thumb|پونٹون پل دریائے زرد کے کنارے بڑے شہر

پونٹون پل (Luokou Pontoon Bridge آسان چینی :洛口浮桥؛ روایتی چینی :洛口浮橋؛ پنین : Luòkŏu Fúqiáo ) جنان ، شیڈونگ میں دریائے پیلے پر صوبوں کے ناموں کے مطابق ڈاون اسٹریم سے اپ اسٹریم کی ترتیب میں اہم پل اور فیریز یہ ہیں: [ حوالہ درکار ]

شیڈونگ

ڈونگینگ ییلو ریور پل
شینگلی یلو ریور برج ( ڈونگینگ )
لیجن پیلے دریا کا پل (ڈونگینگ)
بنزہو یلو ریور روڈ-ریلوے پل
بنزہو یلو ریور ہائی وے پل
Binzhou–Laiwu Expressway Binzhou Yellow River Bridge ( Binzhou – Zibo )
Huiqing Yellow River Bridge (Binzhou–Zibo)
جیانگ پیلے دریا کا پل ( جنان )
G20 Qingdao-Yinchuan ایکسپریس وے جنان پیلے دریا پل (جنان)
جنان یلو ریور پل
Luokou پیلے دریا ریلوے پل (جنان)
جنان جیان بینگ پیلے دریا کا پل
بیجنگ-شنگھائی ہائی سپیڈ ریلوے جنان پیلے دریا کا پل (جنان- ڈیزہو )
بیجنگ-تائی پے ایکسپریس وے جنان پیلے دریا کا پل (جنان-ڈیزہو)
بیجنگ-شنگھائی ریلوے جنان پیلے دریا کا نیا پل (جنان-ڈیزو)
Pingyin پیلے دریا پل (جنان- Liaocheng )
شیڈونگ- ہینن

بیجنگ-کوولون ریلوے سنکو یلو ریور برج ( جننگ - پیوانگ )
جوآنچینگ یلو ریور ہائی وے برج ( ہیز - پویانگ)
ڈونگمنگ ییلو ریور ہائی وے برج (ہیز-پیانگ)
ہینن

Kaifeng پیلے دریا پل ( Kaifeng )
Zhengzhou پیلے دریا پل ( Zhengzhou )
شانسی - ہینن

سانمن پیلے دریا کا پل ( سان مینکسیا )
شانسی - ہینان

Hancheng Yumenkou پیلے دریا پل
ننگزیا

Yinchuan پیلے دریا پل ( Yinchuan )
اندرون منگولیا

Baotou پیلے دریا پل ( Baotou )
گانسو

لانژو یلو ریور پل
Zhongshan پل ( Lanzhou )
چنگھائی

دری پیلے دریا کا پل

حیوانات[سودھو]

مچھلی[سودھو]

پیراڈائز مچھلی ایکویریم کے شوق میں مشہور ہے اور یہ مشرقی ایشیائی ندیوں کے طاسوں سے نکلتی ہے، بشمول پیلا دریا

دریائے زرد کا طاس مچھلیوں سے مالا مال ہے، جو کہ 92 نسلوں اور 28 خاندانوں میں 160 سے زیادہ مقامی پرجاتیوں کا گھر ہے ، جن میں 19 انواع بھی شامل ہیں جو دنیا میں کہیں نہیں پائی جاتی ہیں ( مقامی )۔ [48] ​​[41] تاہم، رہائش گاہ کے نقصان، آلودگی، متعارف شدہ پرجاتیوں اور ضرورت سے زیادہ ماہی گیری کی وجہ سے بہت سے مقامی باشندے کم یا مکمل طور پر غائب ہو گئے ہیں۔ متعدد کو چین کی ریڈ لسٹ میں خطرہ کے طور پر تسلیم کیا گیا ہے۔ [48] ​​[49] ڈیموں اور ان کے ذخائر نے آہستہ چلنے والے اور جامد پانیوں کی انواع کے لیے رہائش میں اضافہ کیا ہے، جبکہ اس نے بہتے ہوئے پانیوں کی انواع کو خارج کر دیا ہے اور دوسروں کی اوپر اور نیچے کی طرف نسل کی نقل مکانی کو روکا ہے۔[48] ​​[49] 2000 کی دہائی میں، دریائے زرد کے طاس میں 63 نسلوں میں صرف 80 مقامی مچھلیاں اور 18 خاندان ریکارڈ کیے گئے۔ [48] ​​اس کے برعکس، متعارف شدہ مچھلیوں کی کثرت اور انواع کی تعداد دونوں میں اضافہ ہوا ہے۔ 1960 کی دہائی میں مچھلی کی صرف ایک متعارف انواع ریکارڈ کی گئی تھی جب ichthyologist Li Sizhong نے اس خطے کے مچھلیوں کے بارے میں اپنا اصل سروے شائع کیا تھا، لیکن 2000 کی دہائی تک ان کی تعداد 26 تھی۔ [48]

جیسا کہ ایشیائی دریاؤں کی خاصیت ہے، Cyprinidae اب تک دریائے زرد کے طاس میں سب سے زیادہ متنوع خاندان ہے۔ اس بیسن میں 85 سے زیادہ سائپرنیڈز ریکارڈ کیے گئے ہیں، جن میں وہ انواع بھی شامل ہیں جو اب بھی موجود ہیں اور وہ انواع جو اب موجود نہیں ہیں۔ دیگر انتہائی متنوع خاندان پتھر کے لوچ (20 سے زیادہ پرجاتیوں)، گوبیز ( سی. 15 پرجاتیوں)، حقیقی لوچ ( سی. 10 پرجاتی) اور بیگریڈ کیٹ فش ( سی. 10 انواع) ہیں۔ [48] ​​اگرچہ دریا کے زیادہ تر حصوں میں انواع پائی جاتی ہیں، لیکن کئی کی حد زیادہ محدود ہے۔ مثال کے طور پر، چنگھائی-تبت سطح مرتفع پر سب سے اوپر، سب سے اونچے حصےنسبتاً کم مقامی انواع ہیں، خاص طور پر سنو ٹراؤٹ اور اتحادی ( جمنوسیپریس ، جمنوڈیپٹائچس ، پلاٹیفاروڈون اور شیزوپائیگوپسس )، اور ٹریپلوفیسا لوچس۔ [50] دریائے زرد کے طاس میں 18 وبائی امراض میں سے 12 اوپری حصے میں پائے گئے (یا تھے)۔ [48] ​​یہ خاص طور پر خطرہ بن گئے ہیں اور بہت سے پانیوں میں مچھلیوں کے حیوانات پر اب متعارف کرائے گئے سالمونائڈز کا غلبہ ہے ۔ [48] ​​[50] اس کے برعکس، دریا کا سب سے نچلا حصہ اور اس کا ڈیلٹا بہت سے کھارے پانی یا یوریہلین کا گھر ہے۔پرجاتیوں، جیسے گوبیز (اگرچہ دریائے پیلے میں میٹھے پانی کے سچے گوبی بھی ہیں)، ایشین سی باسس ، فلیٹ فش اور تاکیفوگو پفر فش۔ [48]

ماہی گیری ایک اہم سرگرمی بنی ہوئی ہے، لیکن کیچز میں کمی آئی ہے۔ 2007 میں، یہ نوٹ کیا گیا کہ دریائے زرد میں پہلے کیچز کے مقابلے 40% کم مچھلیاں پکڑی گئیں۔ [49] بڑے سائپرنیڈز ( ایشیائی کارپ ، شکاری کارپ ، ووچانگ بریم اور منگول ریڈفن ) اور بڑی کیٹ فش ( امور اور لانژو کیٹ فش ) اب بھی موجود ہیں، لیکن سب سے بڑی نسل، چینی پیڈل فش ، کالوگا اسٹرجن اور یانگزے اسٹرجن کی اطلاع نہیں ملی ہے۔ تقریباً 50 سالوں میں دریائے زرد کے طاس سے۔ [48] ​​[41] [51]دیگر انواع جو اہم ماہی گیری کی حمایت کرتی ہیں ان میں سفید Amur bream , ayu , mandarin fish , Protosalanx icefish , Northern snakehead , Asian swamp eel اور دیگر شامل ہیں۔ [48]

ماہی گیری پر سالانہ پابندی 2018 سے لاگو کی گئی ہے، جس میں ہر سال 1 اپریل سے 30 جون تک دریائے زرد کے طاس کا احاطہ کیا گیا ہے۔ دریائے زرد کے بالائی علاقوں میں 1 اپریل 2022 سے قدرتی مچھلیوں کی ماہی گیری پر مکمل پابندی لاگو کی جا رہی ہے، جس میں چنگھائی ، سیچوان اور گانسو صوبوں کا احاطہ کیا جائے گا، 2025 کے آخر تک۔ بقیہ بیسن کے لیے، سالانہ ۔ پابندی کو یکم اپریل سے 31 جولائی تک بڑھا دیا گیا ہے۔ [53]

آبی زراعت[سودھو]

چینی تالاب کا کچھوا (دکھایا گیا) اور چینی نرم شیل کچھوا دونوں ہی دریائے پیلے کے رہنے والے ہیں، لیکن بڑی تعداد میں کھیتی بھی کرتے ہیں۔


دریائے زرد عام طور پر وسطی اور جنوبی چین کے دریاؤں جیسے یانگسی یا دریائے پرل کے مقابلے میں آبی زراعت کے لیے کم موزوں ہے ، لیکن دریائے زرد کے کنارے کچھ علاقوں میں آبی زراعت بھی کی جاتی ہے۔ آبی زراعت کا ایک اہم علاقہ ژینگ ژو سے اوپر کی طرف ژنگ یانگ شہر میں دریا کے کنارے کا میدان ہے ۔ 1986 میں جب سے Xingyang کے دریاؤں کے کنارے وانگکون ٹاؤن میں مچھلی کے تالابوں کی ترقی شروع ہوئی تھی ، وانگکون میں تالاب کے نظام 15,000 mu (10 km 2 ) تک بڑھ چکے ہیں ، جس سے یہ قصبہ شمالی چین کا سب سے بڑا آبی زراعت کا مرکز بن گیا ہے ۔[54]

کچھوؤں کی دو نسلیں دریائے زرد کے طاس سے تعلق رکھتی ہیں: چینی تالاب کا کچھوا اور چینی نرم شیل کچھوا ۔ [55] دونوں انواع — لیکن خاص طور پر نرم خول — کھانے کے لیے بڑے پیمانے پر کاشت کی جاتی ہیں۔ [56] چینی سوفٹ شیل کچھووں کی ایک قسم جو چینی گورمے میں مشہور ہے جسے دریائے زرد کچھو (黄河鳖) کہا جاتا ہے۔ آج کل چین کے ریستوراں میں کھائے جانے والے زیادہ تر دریائے پیلے کے کچھوے کچھوؤں کے فارموں سے آتے ہیں ، جو دریائے پیلے کے قریب بھی ہو سکتے ہیں یا نہیں۔ 2007 میں، ہینن کے شہر وانگکون میں تعمیر شروع ہوئی ۔کچھوے کی اس قسم کی پرورش کے لیے ایک بڑے فارم پر۔ ایک سال میں 5 ملین کچھوؤں کی پرورش کی گنجائش کے ساتھ، یہ سہولت ہینن کا اس قسم کا سب سے بڑا فارم بننے کی امید تھی۔ [57]

بہت بڑا، مکمل طور پر آبی چینی وشال سالینڈر ، ایک ایسی انواع جو بنیادی طور پر خوراک اور روایتی ادویات کے لیے ظلم و ستم کی وجہ سے تیزی سے کم ہوئی ہے ، دریائے زرد اور دیگر چینی دریاؤں سے تعلق رکھتی ہے۔ چین کے کئی حصوں میں اس کی بڑی تعداد میں کاشت کی جاتی ہے اور جینیاتی مطالعات سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ اسیر ذخیرہ زیادہ تر دریائے پیلے سے تعلق رکھتا ہے۔ چونکہ یہ اکثر جنگلی میں چھوڑے جاتے ہیں، چینی دیو سیلامینڈر کی پیلے دریا کی قسم چین کے دوسرے حصوں میں پھیل گئی ہے، جو دوسری اقسام کے لیے ایک مسئلہ کی نمائندگی کرتی ہے۔ [58]

آلودگی[سودھو]

یہ بھی دیکھیں: چین میں پانی کی آلودگی

25 نومبر 2008 کو دی گارڈین کی تانیہ بریگن نے ایک رپورٹ "چین کی ماں دریا: پیلا دریا" درج کرائی، جس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ شدید آلودگی نے چین کے دریائے زرد کا ایک تہائی حصہ زرعی یا صنعتی استعمال کے لیے بھی ناقابل استعمال بنا دیا ہے، جس کی وجہ فیکٹریوں کے اخراج اور سیوریج کی وجہ سے ہے۔ تیزی سے پھیلتے شہروں سے۔ [59] ییلو ریور کنزروینسی کمیشن نے 2007 میں دریا کے 8,384 میل (13,493 کلومیٹر) سے زیادہ کا سروے کیا تھا اور کہا تھا کہ اقوام متحدہ کے ماحولیاتی پروگرام کے استعمال کردہ معیار کے مطابق دریا کے نظام کا 33.8% "سطح پانچ" سے بھی بدتر درج کیا گیا ہے ۔ [ مشکوک - بحث ]سطح پانچ پینے، آبی زراعت، صنعتی استعمال، یا یہاں تک کہ زراعت کے لیے بھی غیر موزوں ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ گزشتہ سال سسٹم میں خارج ہونے والا فضلہ اور سیوریج کل 4.29 بلین ٹن تھا۔ صنعت اور مینوفیکچرنگ نے دریا میں خارج ہونے والے اخراج کا 70% حصہ بنایا جس میں گھرانوں کا حصہ 23% ہے اور صرف 6% دوسرے ذرائع سے آتا ہے۔ [ کونسا؟ ]

ثقافت میں[سودھو]

صوبہ شانسی میں دریائے زرد کے ساتھ کیکو قصبہ

قدیم زمانے میں، یہ خیال کیا جاتا تھا کہ زرد دریا آسمان سے آکاشگنگا کے تسلسل کے طور پر بہتا تھا ۔ ایک چینی لیجنڈ میں کہا جاتا ہے کہ ژانگ کیان کو دریائے زرد کا ماخذ تلاش کرنے کا کام سونپا گیا تھا۔ کئی دنوں تک دریا پر سفر کرنے کے بعد اس نے ایک لڑکی کو کاتتی ہوئی اور ایک گائے کا غول دیکھا۔ لڑکی سے پوچھنے پر کہ وہ کہاں ہے، اس نے اسے اپنی شٹل کے ساتھ نجومی یان جنپنگ (嚴君平) کو دکھانے کی ہدایات کے ساتھ پیش کیا۔ جب وہ واپس آیا تو نجومی نے اسے ویونگ گرل ( ویگا ) کی شٹل کے طور پر پہچانا، اور مزید یہ کہ جس وقت ژانگ نے شٹل حاصل کی، اس نے ایک آوارہ ستارہ دیکھا تھا۔بُننے والی لڑکی اور گائے کے ریوڑ ( Altair ) کے درمیان خود کو ملانا۔ [60]

ہیبی اور ہینان کے صوبوں نے اپنے نام دریائے پیلے سے اخذ کیے ہیں۔ ان کے ناموں کا مطلب ہے، بالترتیب "دریائے کا شمال" اور "دریا کا جنوب"، حالانکہ تاریخی طور پر ان کے درمیان سرحد کبھی مستحکم نہیں رہی، اور فی الحال ہیبی اور ہینان کے درمیان سرحد دریائے زرد نہیں ہے، بلکہ دریائے ژانگ ہے ۔ .

ماں دریا، چین کا دکھ، اور چینی تہذیب کا گہوارہ۔ روایتی طور پر، یہ خیال کیا جاتا ہے کہ چینی تہذیب کی ابتدا دریائے زرد کے طاس سے ہوئی۔ چینی اس دریا کو "مدر دریا" اور "چینی تہذیب کا گہوارہ" کہتے ہیں۔ چین کی طویل تاریخ کے دوران ، دریائے زرد کو ایک نعمت کے ساتھ ساتھ ایک لعنت بھی سمجھا جاتا رہا ہے اور اسے "چین کا فخر" اور "چین کا غم" دونوں کا نام دیا گیا ہے۔ [61]

تباہی کا دریا شمالی چین کے میدانی علاقے میں چینی تہذیب کی ترقی میں دریائے زرد کا مرکزی کردار ہونے کے باوجود، سیلاب اور دریا کے مسلسل روٹ نے بھی طویل عرصے تک دریا کے کنارے آباد آبادی کو بہت بڑی تباہی کا باعث بنایا، اسی لیے اسے تباہی کا دریا بھی کہا جاتا ہے۔ چینی :灾难河)، دریا کی طرف سے آنے والی تباہی کے ساتھ چینی تہذیب کی ترقی میں تباہی کی تاریخ کے طور پر کہا جاتا ہے، اور دریائے زرد کا انتظام قدیم زمانے سے پوری تاریخ میں مختلف چینی خاندانوں کے لیے ایک بڑی سیاسی مصیبت رہی ہے۔ [62] [63]

جب دریائے زرد صاف بہتا ہے۔ کبھی کبھی پیلے دریا کو شاعرانہ طور پر "مڈی فلو" (濁流؛浊流؛ Zhuó Liú ) کہا جاتا ہے۔ چینی محاورہ "جب پیلا دریا صاف بہتا ہے" ایک ایسے واقعے کی طرف اشارہ کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے جو کبھی نہیں ہو گا اور انگریزی کے محاورے "when pigs fly" سے ملتا جلتا ہے۔ [ حوالہ درکار ]

یونگل شہنشاہ کے دور میں "پیلا دریا صاف ہو رہا ہے" کو ایک اچھے شگون کے طور پر بتایا گیا تھا ، اس کے ساتھ ساتھ قلن (ایک افریقی زرافہ جسے ژینگ ہی کے بحری جہاز پر بنگال کے سفارت خانے کے ذریعے چین لایا گیا تھا۔ 1414) اور زوئیو (مثبت طور پر شناخت نہیں کیا گیا) اور دیگر عجیب قدرتی مظاہر۔ [64]


ہورویکھو[سودھو]

حوالے[سودھو]

  1. "صفحہ سانچہ:نام صفحہ في GeoNames ID". http://sws.geonames.org/1807482. Retrieved on
    ۱۳ فروری ۲۰۲۴. 
  2. "صفحہ سانچہ:نام صفحہ في خريطة الشارع المفتوحة". https://www.openstreetmap.org/relation/171843. Retrieved on
    ۱۳ فروری ۲۰۲۴. 
  3. Parker, Edward H. China: Her History, Diplomacy, and Commerce, from the Earliest Times to the Present Day, p. 11. Dutton (New York), 1917.
  4. Bawden, Charles (1997). Mongolian–English Dictionary. Kegan Paul, reprinted 2010 by Routledge, 537 and 593. ISBN 9781136155888. 
  5. the Kultegin stele (side I), line 17
  6. ۶.۰ ۶.۱ سائیٹ غلطی:نا منیا جان والا <ref> ٹیگ کوئی لکھت نئیں دتی گئی اتے پتے :0 لئی۔
  7. Gascoigne, Bamber and Gascoigne, Christina (2003) The Dynasties of China, Perseus Books Group, ISBN [[Special:BookSources/0786712198
  8. The Ice Bombers Move Against Mongolia. strategypage.com (29 March 2011)
  9. Lua error in ماڈیول:Citation/CS1/ar at line 3440: attempt to call field 'set_selected_modules' (a nil value).
  10. ۱۰.۰ ۱۰.۱ Gernet, Jacques. Le monde chinois, p. 59. Map "4. Major states of the Chunqiu period (Spring and Autumn)". سانچہ:In lang
    English version: Gernet, Jacques (1996), A History of Chinese Civilization (Second ed.), Cambridge, England: Cambridge University Press, ISBN 0-521-49781-7 
  11. "Qin Dynasty Map Archived 5 January 2015 at Archive.is".
  12. (2017) Water Engineering in Ancient Civilizations: 5,000 Years of History. CRC Press, 230. ISBN 978-0203375310. 
  13. ۱۳.۰ ۱۳.۱ Elvin, Mark & Liu Cuirong (eds.) Studies in Environment and History: Sediments of Time: Environment and Society in Chinese History, pp. 554 ff. Cambridge Uni. Press, 1998. ISBN [[Special:BookSources/0-521-56381-X.
  14. ۱۴.۰ ۱۴.۱ سائیٹ غلطی:نا منیا جان والا <ref> ٹیگ کوئی لکھت نئیں دتی گئی اتے پتے Treg لئی۔
  15. (2015) The Yellow River. Harvard University Press, 50. ISBN 9780674058248. 
  16. ۱۶.۰ ۱۶.۱ Tsai, Shih-Shan Henry. SUNY Series in Chinese Local Studies: The Eunuchs in the Ming Dynasty. SUNY Press, 1996. ISBN [[Special:BookSources/0791426874, 9780791426876.
  17. ۱۷.۰ ۱۷.۱ سائیٹ غلطی:نا منیا جان والا <ref> ٹیگ کوئی لکھت نئیں دتی گئی اتے پتے R. Grousset لئی۔
  18. Needham, Joseph. Science and Civilization in China. Vol. 1. Introductory Orientations, p. 68. Caves Books Ltd. (Taipei), 1986 ISBN [[Special:BookSources/052105799X.
  19. Lary, Diana. "The Waters Covered the Earth: China's War-Induced Natural Disaster". Op. cit. in Selden, Mark & So, Alvin Y., eds. War and State Terrorism: The United States, Japan, and the Asia-Pacific in the Long Twentieth Century, pp. 143–170. Rowman & Littlefield, 2004 ISBN [[Special:BookSources/0742523918.
  20. سائیٹ غلطی:نا منیا جان والا <ref> ٹیگ کوئی لکھت نئیں دتی گئی اتے پتے video.nytimes.com لئی۔
  21. Yellow River Conservancy Commission. Yellowriver.gov.cn. Retrieved on 2013-02-04.
  22. J Paul Liu, John D Milliman, Shu Gao, Peng Cheng (2004). "Holocene development of the Yellow River's subaqueous delta, North Yellow Sea". Marine Geology 209 (1–4): 45–67. doi:10.1016/j.margeo.2004.06.009. Bibcode2004MGeol.209...45L. 
  23. Leung, George (1996). "Reclamation and Sediment Control in the Middle Yellow River Valley". Water International 21 (1): 12–19. doi:10.1080/02508069608686482. http://emw21.com/CTS/GeorgeLeung/YRiver/geofo/geogren.html.  Archived 14 December 2013 at the وے بیک مشین
  24. Yellow River Delta Shrinking 7.6 Square Kilometers Annually, China Daily 1 February 2005
  25. Yellow River Upstream Important to West-East Power Transmission People's Daily, 14 December 2000

باہرلےجوڑ[سودھو]

Works from the National Central Library about the Yellow River