بیدم وارثی

وکیپیڈیا توں
Jump to navigation Jump to search
بیدم وارثی
ادیب
پیدائشی نامسراج الدین
قلمی نامبیدم وارثی
تخلصبیدم
ولادت1876ء اٹاوہ
ابتدااٹاوہ، بھارت
وفات1936ء لکھنوء (پنجاب)
اصناف ادبشاعری
ذیلی اصنافغزل، نعت
تعداد تصانیفدو
تصنیف اولارمغانِ بیدم
تصنیف آخرمُحصف بیدم
معروف تصانیفارمغانِ بیدم ،مُحصف بیدم
ویب سائٹ/ آفیشل ویب سائٹ

بیدم وارثی عظیم نعت گو شاعر ني‏‏‏‏ں۔

ناں[لکھو]

اصل ناں سراج الدین بیدم تخلص سی مرشد تو‏ں نسبت دے بعد بیدم شاہ وارثی اکھوائے۔

پیدائش[لکھو]

1876ء اٹاوہبھارت انتہائی فقیرانہ زندگی گزاری۔

تعلیم و تربیت[لکھو]

ساری تعلیم اٹاوہ وچ ہی حاصل کيتی شاعری تو‏ں لگاؤ انہاں نو‏ں آگرہ لے گیا نثار اکبر آبادی دے حلقہ تلامذہ وچ شامل ہوئے گئے۔

تصوف تو‏ں شغف[لکھو]

نثار اکبر آبادی تو‏ں شاعری د‏‏ی اصلاح دے نال نال وارثی سلسلہ وی مل گیا انہاں دے مرشد دا ناں حاجی وارث علی شاہ سن جنہاں تو‏ں حقائق معارف د‏‏ی چاشنی ملی تے نعت د‏‏ی طرف متوجہ ہوئے جدو‏ں کدی کوئی غزل منقبت لکھدے آستانہ وارثی اُتے سنا‏تے بعد وچ کِس‏ے تے نو‏‏ں سنا‏تے

القابات[لکھو]

سراج الشاعر تے لسان الطریقت

لکھتاں[لکھو]


ارمغانِ بیدم
مُحصف بیدم[1]

وفات[لکھو]

1936ءحسین گنج لکھنؤ - بھارت وچ وفات ہوئی وصیت دے مطابق انہاں نو‏ں دیوہ شریف لے جاک‏ے شاہ اویس قبرستان وچ دفن کيت‏‏ا گیا[2]

نمونہ کلام[لکھو]


نوٹ: بیخود کیے دیتے ہیں انداز حجابانہ ، آ دل میں تجھے ررکھ لوں اے جلوہء جانانہ۔ یہ مطلع کہاں سے لیا گیا ہے؟ یہ تو بیدم وارثی کا کلام نہیں ہے اور یہ شعر جی چاہتا ہے تحفے میں بھیجوں میں انہیں آنکھیں۔۔۔ درشن کا تو درشن ہو، نذرانے کا نذرانہ ۔ ایہ شعر وی دیوانِ بیدم وارثی وچ موجود نني‏‏‏‏ں۔ ہاں البتہ فیس بک یا کدرے تے جگہاں اُتے کلام ایداں دے موجود ا‏‏ے۔ لیکن اس دا حوالہ کوئی نني‏‏‏‏ں۔ ایويں لگدا اے ایتھ‏ے اشعار بھرتی کیتے گئے نيں جے اس دا کوئی حوالہ موجود ہوئے تاں عنایت کیجیے وگرنہ درستی کيت‏ی جائے۔اگرحوالہ دست یاب نہ ہوئے تاں اس انتخاب نو‏‏ں ختم کر دتا جائے ۔ درخواست اے کہ ایتھ‏ے صرف تے صرف مستند معلومات مہیا د‏‏ی جان۔ بغیر تحقیق کےایتھ‏ے اشاعت مناسب نني‏‏‏‏ں۔ جواب دا انتظار رہے گا۔

یبخود کیے دیتے ہیں انداز حجابانہ
آ دل میں تجھے رکھ لوں اے جلوہء جانانہ
بس اتنا کرم کرنا اے چشمِ کریمانہ
جب جان لبوں پر ہو تم سامنے آجانا
دنیا میں مجھے تو نے گر اپنا بنایا ہے
محشرمیں بھی کہہ دینا یہ ہے میرا دیوانہ
جی چاہتا ہے تحفے میں بیھجوں میں اُنہیں آنکھیں
درشن کا تو درشن ہو نزرانے کا نذرانہ
پینے کو تو پی لوں گا پر عرض ذرا سی ہے
اجمیر کا ساقی ہو بغداد کا میخانہ
کیوں آنکھ ملائی تھی کیوں آگ لگائی تھی
اب رُخ کو چھپا بیٹھے کر کہ مجھے دیوانہ
ہر پھول میں بُو تیری، ہر شمع میں ضو تیری​
بلبل ہے ترا بلبل، پروانہ ترا پروانہ ​
جس جاء نظر آتے ہو سجدے وہیں کرتا ہوں ​
اس سے نہیں کچھ مطلب کعبہ ہو یا بُت خانہ​
میں ہوش و حواس اپنے اس بات پہ کھو بیٹھا​
ہنس کر جو کہا تُو نے آیا میرا دیوانہ ​
بیدم میری قسمت میں سجدے ہیں اُسی در کہ
چُھوٹا ہے نہ چُھوٹے گا سنگِ در جانانہ
کیا لطف ہو محشر میں میں شکوے کیے جاؤں
وہ ہنس کہ کہے جائیں دیوانہ ہے دیوانہ
ساقی تیرے آتے ہی یہ جوش ہے مستی کا
شیشے پہ گرا شیشہ پیمانے پہ پیمانہ
معلوم نہیں بیدم میں کون ہوں اور کیا ہوں
یوں اپنوں میں اپنا ہوں بیگانوں میں بیگانہ

مشہور کلام[لکھو]


عدم سے لائی ہے ہستی میں آرزوئے رسول
نہ کرو جدا خدا را مجھے اپنے آستاں سے
برق جمال یار نے رخت سکوں جلا دیا
آئی نسیم کوئے محمد صل اللہ علیہ وسلم
مرا دل اور مری جان مدینے والے
کعبہ دل قبلہ جان طاق ابروئے علی
تم جو چاہو تو مرے درد کا درماں ہو جائے
کعبہ کا شوق ہے نہ صنم خانہ چاہیے
کا ش مجھ پر ہی مجھے یار کا دھوکا ہو جائے
ادا پر تری دل ہے آنے کے قابل
کیا پوچھتے ہو گرمی بازار مصطفے ٰؐ
خدا جانے کہاں سے جلوۂ جاناں کہاں تك ہے
کاش مری جبین شوق سجدوں سے سرفراز ہو
کون سا گھر ہے کہ اے جاں نہیں کا شانہ ترا
ہے روز الست سے اپنی سدا وارث مجھ میں میں وارث میں
کھینچی ہے تصّور میں تصویر ہم آغوشی
سہارا موجوں کا لے لے کے بڑھ رہا ہوں میں
نہ محراب حرم سمجھے نہ جانے طاقِ بتخانہ

حوالے[لکھو]

  1. Bio-bibliography.com – Authors
  2. کلام بیدم،ام حیاء المصطفے،بہار الاسلام پبلیکیشنز لاہور