عدیم ہاشمی

آزاد انسائیکلوپیڈیا، وکیپیڈیا توں
عدیم ہاشمی
پیدائشی نام (اردو وچ: فصیح الدین)،  (انگریزی وچ: Fashih Uddin ویکی ڈیٹا اُتے (P1477) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
جم 1 اگست 1946  ویکی ڈیٹا اُتے (P569) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن


فیروز پور  ویکی ڈیٹا اُتے (P19) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن

وفات 5 نومبر 2001 (55 سال)  ویکی ڈیٹا اُتے (P570) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن


شکاگو  ویکی ڈیٹا اُتے (P20) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن

مدفن شکاگو  ویکی ڈیٹا اُتے (P119) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
شہریت پاکستان  ویکی ڈیٹا اُتے (P27) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
اولاد ساحل عدیم،  زریاب ہاشمی  ویکی ڈیٹا اُتے (P40) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
عملی زندگی
پیشہ شاعر،  لکھاری  ویکی ڈیٹا اُتے (P106) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
پیشہ ورانہ زبان اردو  ویکی ڈیٹا اُتے (P1412) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
باب ادب

عدیم ہاشمی (پیدائش: 1 اگست، 1946ء - وفات: 5 نومبر، 2001ء) پاکستان نال تعلق رکھݨ والے اردو دے نامور شاعر تے ڈراما لکھاری سن ۔

حالات زندگی تے ادبی خدمات[سودھو]

عدیم ہاشمی یکم اگست، 1946ء نو‏‏ں فیروز پور، برٹش پنجاب وچ پیدا ہوئے۔ اوہناں دا اصل ناں فصیح الدین سی۔[۱][۲]۔ عدیم ہاشمی دا شمار اردو دے جدید شاعر وچ ہُندا سی۔ اوہناں دے متعدد شعری مجموعے شائع ہوئے جیہناں وچ ترکش، مکالمہ، فاصلے ایسے بھی ہوں گے، میں نے کہا وصال، مجھے تم سے محبت ہے، چہرا تمہارا یاد رہتا ہے، کہو کتنی محبت ہے تے بہت نزدیک آتے جا رہے ہو دے ناں سرفہرست نيں۔ اوہناں نے پاکستان ٹیلی وژن لئی اک ڈراما سیریئل آغوش وی تحریر کيتا تے مشہور ڈراما سیریز گیسٹ ہاؤس لئی وی کچھ ڈرامے تحریر کيتے۔[۲]

لِکھتاں[سودھو]

شعری مجموعے[سودھو]

  • مکالمہ
  • بہت نزدیک آتے جا رہے ہو
  • چہرہ تمہارا یاد رہتا ہے
  • فاصلے ایسے بھی ہوں گے
  • ترکش
  • کہو کتنی محبت ہے
  • میں نے کہا وصال
  • مجھے تم سے محبت ہے

ڈرامے[سودھو]

  • گیسٹ ہاؤس
  • آغوش

نمونۂ کلام[سودھو]

غزل

فاصلے ایسے بھی ہونگے یہ کبھی سوچا نہ تھا سامنے بیٹھا تھا میرے اور وہ میرا نہ تھا
خود چڑھا رکھے تھے تن پر اجنبیت کے غلاف ورنہ کب ایک دوسرے کو ہم نے پہچانا نہ تھا
وہ کے خوشبو کی طرح پھیلا تھا میرے چار سو میں اسے محسوس کر سکتا تھا چھو سکتا نہ تھا
رات بھر پچھلی ہی آہٹ کان میں آتی رہی جھانک کر دیکھا گلی میں کوئی بھی آیا نہ تھا
عکس تو موجود تھا پر عکس تنہائی کا تھا آئینہ تو تھا مگر اس میں ترا چہرا نہ تھا
آج اس نے درد بھی اپنے علاحدہ کر لیے آج میں رویا تو میرے ساتھ وہ رویا نہ تھا
یہ سبھی ویرانیاں اس کے جدا ہونے سے تھیں آنکھ دھندلائی ہوئی تھی شہر دھندلایا نہ تھا
سینکڑوں طوفان لفظوں کے دبے تھے زیرِ لب ایک پتھر تھا خموشی کا جو ہلتا نہ تھا
یاد کر کے اور بھی تکلیف ہوتی تھی عدیم بھول جانے کے سوا اب کوئی بھی چارہ نہ تھا

شعر

بچھڑ کے تجھ سے نہ دیکھا گیا کسی کا ملاپ اُڑا دیئے ہیں پرندے شجر میں بیٹھے ہوئے

شعر

بہت نزدیک آتے جارہے ہوبچھڑنے کا ارادہ کر لیا کیا

وفات[سودھو]

عدیم ہاشمی 5 نومبر، 2001ء نو‏‏ں شکاگو، ریاستہائے متحدہ امریکا وچ وفات پا گئے تے شکاگو وچ پاکستانیاں دے قبرستان وچ سپرد خاک ہوئے۔[۱][۲]

حوالے[سودھو]