راحت اندوری

وکیپیڈیا توں
Jump to navigation Jump to search
Nuvola apps ksig.png
راحت اندوری
Rahat Indori.jpg
جم راحت
(1950-01-01) 1 جنوری 1950 (عمر 70)
اندور، مدھیہ پردیش، بھارت
کم کِتہ اردو شاعر، گیت کار
قومیت بھارتی
شہریت بھارتی
تعلیم ایم اے، پی ایچ ڈی
مادر علمی برکت اللہ یونیورسٹی، بھوپال
صنف غزل، نظم، گیت
سوانی سیما
نیانے شبلی، فیصل، ستلاج
ویب سائٹ
http://www.rahatindori.co.in

راحت اندوری (ہندی: डॉ. राहत इन्दोरी ) (جنم 1 جنوری 1950) اک بھارتی اردو شاعر اتے بالیوڈّ گیت کار ہے۔[1] اس توں پہلاں اوہ اندور یونیورسٹی وچّ اردو ساہت دا استاد سی۔

مڈھلا جیون[لکھو]

راحت دا جنم اندور وچّ 1 جنوری 1950 وچّ کپڑا مل دے ورکر رفت اللہقریشی اتے مقبول انشا بیگم دے گھر ہویا۔ اوہ اوہناں دی چوتھی اولاد ہے۔ اوہناں دی مڈھلی سکھیا نوتن سکول اندور وچّ ہوئی۔ اوہناں نے اسلامیہ کریمیا کالج اندور توں 1973 وچّ اپنی بی اے کیتی[2] اتے 1975 وچّ برکت اللہ یونیورسٹی، بھوپال توں اردو ساہت وچّ ایم اے کیتی۔[3] اسدے بعد 1985 وچّ مدھیہ پردیش دے مدھیہ پردیش بھوج آزاد یونیورسٹی توں اردو ساہت وچّ پی ایچ ڈی کیتی۔ راحتَ اندوری نے آئی کے کالج ، اندور وچ اردو ساہت دے استاد وجوں وی سیوا نبھائی ۔ [4]

کتاباں[لکھو]

اردو[لکھو]

  • دھوپ دھوپ، 1978
  • پانچواں درویش، 1993
  • ناراض

ناگری[لکھو]

  • میرے بعد، 1984
  • موجود، 2005
  • ناراض
  • چاند پاگل ہے، 2011

شاعری دے نمونے[لکھو]

دوزخ کے انتظام میں الجھا ہے رات دن
دعویٰ یہ کر رہا ہے کے جنت میں جائیگا

ایک چنگاری نظر آئی تھی بستی میں اسے
وو الگ ہٹ گیا آندھی کو اشارہ کرکے

خوابوں میں جو بسی ہے دنیا حسین ہے
لیکن نصیب میں وحی دو گز زمین ہے


میں لاکھ کہ دوں آکاش ہوں زمیں ہوں میں
مگر اسے تو خبر ہے کہ کچھ نہیں ہوں میں

عجیب لوگ ہے میری تلاش میں مجھکو
وہاں پے ڈھونڈھ رہے ہے جہاں نہیں ہوں میں


طوفانوں سے آنکھ ملاؤ، سیلابوں پر وار کرو
ملاہوں کا چکر چھوڑو، تیر کے دریا پار کرو

پھولوں کی دکانیں کھولو، خشبو کا ویاپار کرو
اشک خطا ہے تو، یہ خطا ایک بار نہیں، سو بار کرو


ہمسے پوچھو کے غزل مانگتی ہے کتنا لہو
سب سمجھتے ہیں یہ دھندھا بڑے آرام کا ہے

پیاس اگر میری بجھا دے تو میں مانو ورنہ ،
تو سمندر ہے تو ہوگا میرے کس کام کا ہے


اگر خیال بھی آئے کہ تجھکو خط لکھوں
تو گھونسلوں سے کبوتر نکلنے لگتے ہیں


لگیگی آگ تو آئینگے گھر کئی زد میں
یہاں پے صرف ہمارا مکان تھوڑی ہے

میں جانتا ہوں کے دشمن بھی کم نہیں لیکن
ہماری ترہا ہتھیلی پے جان تھوڑی ہے


زندگی کیا ہے خود ہی سمجھ جاؤگے
بارشوں میں پتنگیں اڈایا کرو


ن جانے کون سی مزبوریؤں کا کیدی ہو
وو ساتھ چھوڑ گیا ہے تو بے وفا ن کہو


نئے کردار اعتے جا رہے ہیں
مگر ناٹک پرانا چل رہا ہے

باہری سروت[لکھو]

حوالے[لکھو]