موسیٰ بن میمون

وکیپیڈیا توں
جاؤ: پاندھ, کھوج
موسیٰ بن میمون
Maimonides-2.jpg
جم 1135 or 1138
قرطبہ، دولت مرابطین (اج دا ہسپانیہ)
موت 12 December 1204 (aged 69)
فسطاط، مصر، یا قاہرہ، Egypt[1]
مذہب یہودیت
ویلہ Medieval Philosophy
علاقہ Arab Mediterranean
سکول Jewish philosophy، Jewish law, Jewish ethics
Signature

موسیٰ بن میمون (عبرانی: משה בן מימון‎ تلفظ: موشیہ بن میمون) بارہویں صدی دا مشہور یہودی ربی، فلسفی، طبیب تے تورات دے عالم سی۔اسنوں رامبام وی کہیا جاندا ہے، جو اےدے عبرانی نام دی مختصر شکل ہےـموسیٰ بن میمون ہی اوہ بیکالین یہودی فلسفی جس نے لکھا سی"الجھن دا راه نما" ("Guide of the Perplexed")

جم[لکھو]

موسیٰ بن میمون 1135عیسوی وچ تے دوسری روایت دے مطابق 30 مارچ 1138 نوں قرطبہ ، سپین وچ جمیا ۔اُسدا پیدائشی ناں موسى ابن ميمون ہے۔

حالات زندگی[لکھو]

یونانی اور مسلم فلسفہ کی تعلیم حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ انہوں نے اپنے والد سے تورات کی تعلیم بھی لی ـ جب المغرب سے الموحدون کی افواج اندلس کو فتح کرنے آئیں تو ان کا خاندان فرار ہو گیا اور موسی بن میمون فاس میں آ پہنچے جہاں پر انہوں نے دنیاوی تعلیمات بھی حاصل کیں ـ کچھ عرصہ فلسطین میں گزارنے کے بعد وہ فسطاط پہنچے جہاں انہوں نے سلطان صلاح الدین ایوبی کے طبیب کا فرض انجام دیاـ
موسى ابن ميمون كو ايک عظيم یہودی فلسفی,ڈاکٹر، راہب ، مذہبی سکالر ، ریاضی ، فلکیات ، اور دوا کے فن پر مبصر کے طور پر جانا جاتا ہے اس کا اثر صدیوں اور ثقافتوں پر پھیلا ہوا ہے.وه سپین میں پیدا ہوئے تھے اور اپنے والد سے تعلیم حاصل كى جوایک یہودی جج تها وه قاہرہ میں جا بسے ، اور مصر کے دو وزرا صلاح الدين اورمحمد فاضل کےسركارى معالج بن گئے اور یہودی معاشرہ کے چیف ربی بهى.اپنى كتاب (Guide of the Perplexed) میں وہ فلسفیانہ دلیل کا استعمال کرتا ہے کہ بائبل اور یہودی عقيده ارسطو كى سوچ سے متنازع نہیں ہے . موسى بن ميمون کے ایمان کے تیرہ اصول (Thirteen Principles of Faith) یہودی عبادت گاہوں میں اب تک پڑھی جاتے ہيں ان کا لقب ، Rambam، راہب موشے بن ميمون کا مخفف ہے عالم ان کے سال پیدائش پر متفق نہیں ہیں وہ کثیر زبانی تهے ،اور ان کی تحقیق زیادہ عربی میں ہے برکلن ، نیویارک ، سان فرانسسکو اور مونٹریال کے ہسپتال اس کے نام پر ہيں انہوں نے ہی مشنا توریت کو عبرانی زبان میں لکھا۔

وفات[لکھو]

ان کا انتقال فسطاط ہی میں 13 دسمبر 1204 کو ہوا اور انہیں طبریہ (موجودہ اسرائیل میں ، بحیرہ طبریہ کے کنارے) میں سپردِ خاک کیا گیاـطبريہ کے گلیلی شہر میں انكى قبر صدیوں سے سیاحوں کو اپنی طرف متوجہ کیے ہوئے ہے.

حوالے[لکھو]

سانچہ:یہود تے یہودیت