ایرانی بولیاں

وکیپیڈیا توں
جاؤ: پاندھ, کھوج
ایرانی
جغرافیائی
تقسیم:
جنوب مغربی ایشیا ، وسطی ایشیا ، تے مغربی جنوبی ایشیا
لسانی درجہ بندی: ہند۔یورپی
سابقہ اصل-زبان: پیش ایرانی
ذیلی تقسیمات:
آیزو 639-2 / 5: ira
اجوکی ایرانی بولیاں دا نقشہ

ایرانی بولیاں ہند ایرانی بولیاں دی اک ذیلی شاخ ہن۔ تے ہند ایرانی بولیاں آپ ہند یورپی بولیاں دی اک ذیلی شاخ ہن۔ اجوکے ویلے وچّ دنیا وچّ لگبھگّ 15-20 کروڑ لوک کسے نہ کسے ایرانی بولی نوں اپنی ماں بولی دے روپ وچّ بولدے ہن اتے ایتھنالاگ بولی انسائکلوپیڈیا وچّ 2011 تکّ 87 ایرانی بولیاں درج سن۔ ایہناں وچوں فارسی دے 7.5 کروڑ، پشتو دے 5-6 کروڑ، کردی بولی دے 3.2 کروڑ، بلوچی بولی دے 2.5 کروڑ اتے لوری بولی دے 23 لکھ بولن والے سن۔ ایرانی بولیاں ایران، افغانستان، تاجکستان، پاکستان (بلوچستان اتے خیبر پختونخواہ صوبےآں )،ترکی(چڑھدے وچّ کرد علاقےآں) اتے عراق (شمال وچّ کرد علاقےآں) وچّ بولیاں جاندیاں ہن۔ پارسی دھرم دی مذہبی بولی، جس نوں اویستا کہندے ہن، وی اک پرانی ایرانی بولی ہے۔

تفصیل[لکھو]

ہند یورپی بولیاں دی شاخ تے ہند ایرانی بولیاں دی ذیلی شاخ ، ایرانی بولی ٹبر ہند آریا ذیلی شاخ وانگ ہی اہم ہے ۔ پرانے ویلے وچّ ایہہ پرانی فارسی ( پارسی ) دے روپ وچّ اک راج بولی (حکومی بولی) سی اتے اوستائی دے روپ وچّ مذہبی بولی سی ۔ وچکارلے ایرانی ویلے وچّ دو ایرانی بولیاں مستحکم ہوئیاں ، چڑھدے علاقے وچّ سوگدی اتے لہندے علاقے وچّ پہلوی ۔ ایہناں دے علاوہ فارسی بہت سماں تکّ ایشیا دے وڈے جغرافیائی علاقے وچّ رہتل دی بولی رہی ۔


پرانی فارسی ایران دے دکھن - لہندے کونے دی بولی سی ۔ اسدی جان پہچان سانوں عجائب گھراں وچّ کھدے ہوئے ہخامنشی بادشاہاں دے کتبےآں توں ملدی ہے ۔ ایہناں دی لپی شاید اکدی لپی توں جڑی ہے ۔ سبھتوں پرانا لیکھ اریا رگن ( 610 - 580 قبل مسیح ) دا دسیا جاندا ہے ، پر سبھتوں اہمیت دے لیکھ بادشاہ دارا اول( 520 - 486 ق م) دے ہاں جو اسدے سلطنت وچّ سبھنی تھانئیں پائے جاندے ہن ۔ ایہناں وچّ وی بہستون دا کتبہ سبتوں مشہور ہے ۔ پرانی فارسی دے نال نال ایہہ لیکھ ہور دو بولیاں( ایلامی اتے بیبیلونی ) وچّ وی پائے جاندے ہن ۔

ایرانی بولیاں دی مورت جس وچ اسدیاں شاخاں وکھایاں گیاں نیں
اجوکا ایرانی بولیاں دی پھیلاؤ

اوستائی دھرمگرنتھ دی بولی ہے اتے ویدک سنسکرت دے بہت قریب ہے ۔ اویستا اہورامزدا دے سیوک پارسی لوکاں دی مذہبی کتاب ہے ۔ اسوچّ وکھ وکھ ویلےآں وچّ رچت اپاسنا اتے ارداس دے سوکت پائے جاندے ہن ۔ رگوید دی وانگ اویستا وی شُرتی پرمپرا(سنی سنائی روایت) اتے ہی منحصر سی اتے ایہہ پہلوی حرفاں وچّ ساسانی بادشاہاں دے ویلے وچّ لیکھبندھّ کیتی گئی ۔ ودوان‌ اسدے پرانے حصےآں دا ویلہ اٹھوی صدی قبل مسیح نردھارت کردے ہن ۔ ایہہ ایران دے چڑھدے حصے دی بولی سی ۔ پرانی ایرانی دا اویستی اتے پرانی فارسی نوں چھڈکے سانوں اتے کوئی لیکھ نہیں ملدا ۔

وچکار ایرانی دے دو گروہ ہن :

لہندیاں ایرانی بولیاں[لکھو]

لہندی وچکارلی ایرانی نوں پہلوی کہندے ہن ۔ اس شبد دا تعلق پہلویک‌ قبیلے توں سمجھیا جاندا ہے ۔ ایہہ ساسانی سلطنت( 226 ق م - 652 ء) دی راجبھاشا سی اتے اسوچّ لکھتی بہت سارے مذہبی اتے ہور گرنتھ ملدے ہن ۔ ایہناں دی لپی آرمینی لپی توں پربھوت اتے متاثر لگدی ہے ۔ وچکارلی ایرانی دیاں کئی بولیاں دے کتبے اتے کتبے کتاباں ہنے 50 - 60 سال پہلے ترفان ( چڑھدا ترکستان ) وچّ لبھیاں ہن ۔ ایہناں وچّ پارتھی بولی الیکھنیی ہے ۔ وچکارلی فارسی وی اس گروپ دی ہے ۔ اسوچّ ساسانی بادشاہاں دے کتبے ملدے ہن ۔ ایہی بولی پزند نام توں اویستی دھرم دیاں کتاباں لئی وی ورتوں وچّ آئی ہے ۔

چڑھدی ایرانی بولیاں[لکھو]

چڑھدی وچکارلی ایرانی وچّ چڑھدے ترکستان وچّ لبھے ساہت دیاں بولیاں ہن ۔ ایہناں وچّ بخارا اتے سمرقند دے علاقے دی پرانی بولی سوگدی ہے جو ایشیا دے وچکارلا علاقے دی بولی رہی ہوویگی ۔ ایہہ منگولیا توں لے کے تبت دے سرحدی علاقے تکّ پھیلی ہوئی سی ۔ اسوچّ بدھ دھرم دیاں کتاباں ( بوہتیاں چینی بولی توں ترجمہ ) , عیسائی دھرمگرنتھ ( سیرییائی بولی توں ترجمہ اتے اصل ) اتے منیچی گرنتھ ملدے ہن ۔ سبھتوں پرانے گرنتھاں دا ویلہ عیسوی چوتھی صدی ہووےگا ۔ سوگدی دے علاوہ اس گروپ دی دوجی اہم بولی خوتانی ہے ۔ اسنوں ساکا وی کہندے ہن ۔ اسوچّ بہت سارے دھرمگرنتھ اٹھویں توں 10ویں صدی عیسوی دے لکھے ہوئے ملے ہن ۔ ایہناں وچّ بہت سارے بدھ دھرم دے متعلق ہن ۔ لپی سبھ دی براہمی ہے اتے شبداولی(ووکیولری) وچّ پراکرت دے بہت سارے شبد ملدے ہن ۔

جدید ایرانی بولیاں دی سبھتوں اہم بولی فارسی ہے ۔ ایہہ عربی - فارسی لپی وچّ لکھی جاندی ہے ۔ ایہہ افغانستان توں لے کے لہندے دے کافی وڈے جغرافیائی علاقے وچّ رہتل دی نمائندہ بولی ہے ۔ اسوچّ اٹھویں صدی عیسوی توں لے کے پربھوت ساہت دا سرجن ہویا ہے ۔ بناوٹ دی نظر توں پامیری بولیاں , کردی ، بلوچی اتے پشتو وی ایرانی ذیلی شاخ دے اندر ہن ۔ وسعت دی نظر توں ہند - ایرانی شاخ دی تنّ بولیاں نے بوہت اہمیت حاصل کیتی - سنسکرت , پالی اتے فارسی اتے ایہہ تنوں تہذیت اتے تمدن دیاں بولیاں رہیاں ۔

ایرانی بولیاں دا ارتقاء[لکھو]

ایرانی زباناں قدیم زمانے توں ہی دوحصےآں وچ ونڈیاں سن۔ اس دی وجہ ایران دے جغرافیائی حالات سی۔ جغرافیائی اعتبار نال ایران دوحصےآں وچ ونڈیا ہویا اے ، اک مشرقی تے دوسرا مغربی۔ جنہاں دے درمیان اک وسیع صحرا سی ۔ انہاں دوہاں وچکار کدی وی قریبی تعلقات پیدا نہ ہوسکے، لہذا انہاں دیاں بولیاں مختلف سن ۔ اک اوستا تے دوسری قدیم فارسی سی ۔ اوستا شمالی ایران دی اک شاخ سی تے قدیم فارسی جنوبی ایران دی۔ اوستا دے سب توں قدیم حصے ستویں صدی قبل مسیح دے نہیں ہو سکدے نیں۔ ساسانیاں دے راج ویلے وچ (پنچویں صدی عیسوی) اوستا دی اصل عبارت دی نویں سرےاوں ترتیب دتی گئی سی۔ ممکن ہے اس وچ اوس زمانے دے لب و لہجہ اس وچ عبارت ہون۔ قدیم فارسی ایران دی سرکاری زبان سی۔ اس وچ آریائی زبان دے بوہت سارے سبد پائے جاندے نیں۔ کیوںجے ہخامنشیاں دی زبان آریائی سی۔

خصوصیات[لکھو]

ایرانی زبان کی خاص نوعیتیں یہ ہیں کہ مَییے کی تحقیقات سے ظاہر ہوتا ہے کہ ایرانی زبان کا بنیادی دباؤ والا ہے۔ یہ دباؤ لفظ کے ماقبل آخری رکن پر پڑتا ہے۔ اگر وہ رکن لمبا ہو اور ماقبل آخر رکن سے پہلے رکن پڑتا ہے۔ اگر وہ رکن رکن چھوٹا ہو مثلاً ’یزدان‘ (پرستش کرتے ہوئے) حالت اضافی جمع۔ یہ پہلوی میں قدیم ایرانی قدیم ایرانی ’یزتاہم‘ سے بنا ہے۔ جس میں ماقبل آخر رکن ’تا‘ لمبا ہونے کی وجہ سے پر دباؤ پڑا ہے۔ اس کے برعکس ’بیست‘ (بیس) ’وستی‘ سے بنا ہے، جس میں دباؤ ماقبل آخر رکن سے پہلے ’وی‘ پر پڑتا ہے۔ اس دباؤ کی علامات اوستا میں بھی پائی جاتی ہیں، جس میں تاکیدی رکن آنے والی ’ر‘ کی ’ہ + ر‘ ہوجاتی ہے۔ اگر اس کے بعد ’ک یا پ‘ آجائے۔ مثلاً ’دہر کو‘ اوستا میں اور سنسکرت میں ’درک‘ (بھیڑیا)۔ چونکہ اس قسم کا لہجہ شَتَ پتھ برہمن میں پایا گیا ہے۔ اس لئے غالباً یہ لہجہ آریائی تھا جس کے اثرات آریائی تبدیلی حروف علت پر پائے گئے ہیں۔ مثلاً سنسکرت ’استِ‘ (وہ ہے)۔ اس میں پہلے رکن ’اَس‘ پر دباؤ بڑنے کی وجہ سے ’ا‘ برقرار ہے۔ لیکن تثنیہ ’ستہ‘ (وہ ہیں)۔ اس میں دوسرے رکن پر دباؤ پڑنے کی وجہ سے پہلے رکن کے ’اَ‘ حذف ہوگیا ہے۔ بالکل اس طرح اوستامیں ’اس ت‘ (وہ ہے) لیکن ’نئی‘ (وہ دو ہیں)۔

قدیم ایرانی کی دوسری خصوصیت ایک دلچسپ مظہر دیکھا گیا ہے، جو عہد حاضر کی ہند آریائی زبانوں میں وسیع پیمانے پر پایا جاتا ہے۔ یعنی کسی کام کی تکمیل کو جتلانے کے لئے مصدر ’بو‘ یا ’اہ‘ (ان دونوں کے معنی ’ہونا‘ ہے) کسی فعل دوسرے فعل کے مشتق لفظ کے ساتھ لگایا جاتا ہے۔ جس کی تشکیل حالت طرفی یا مقامی ہوتی ہے۔ مثلاً ’یپندی شے ] بوائتی [ سنھم چت اُن استرائی‘ (اگر وہ حکم بجالاتا ہے)۔ یہاں فعل ’بوائتی‘ دوسرے فعل کی مشتق ظرفی ’سترائی‘ کے ساتھ بجالاتا ہے کے معنی میں استعمال کیا گیا ہے۔ اردو میں اس قسم کے بے شمار مرکب استعمال ہوتے ہیں۔ مثلاً ’آجاؤ، پی لو ِ‘ اس طریقہ کی بنا قدیم ہند آریائی میں موجود نہیں ہے۔ شاید یہ عہد حاضر کی ہند آریائی میں یہ مظہر ایرانی کے اثر کا نتیجہ ہے۔ لیکن اس موضع کی واضع تحقیقات ہونی لازمی ہیں۔

تیسری خصوصیت نحوی ترکیب میں قدیم ایرانی کی حالت اضافی، مطلق، حالت مقامی مطلق اور حالت فاعلی مطلق قابل ذکر ہیں۔ ہند یورپی میں صرف ایرانی ایک ایسی زبان ہے، جس میں ہند یورپی ’گ، ج اور گھ‘ کے مشتق الگ الگ ہیں۔ مثلاً ہند یورپی ’گ‘، ہند آریائی ’ج‘، آرمینائی ’چ‘، ایرانی ’ز‘ اور بالٹک سلافی ’ز‘ ہے۔ اوستا اور قدیم فارسی میں ’ل‘ کی بالکل عدم موجودگی تھی۔ وسطی فارسی میں بھی ’ل‘ کی کوئی واضح علامت نہیں ملتی ہے۔

اوستا[لکھو]

ایران دی پرانی بولی اوستا سی ۔ کیونکہ زرتشت دی مذہبی کتاب اسے بولی وچّ لکھی گئی سی ، اس لئی اس دی نسبت نال اوستا کہاؤندی ہے ۔ کجھ محْیقین دا مننا ہے کہ اوستا مادی عہد دی بھاشا سی ، اتے پرانی فرنس اسے بولی توں نکلی ہے ۔ اوستا دی لپی سامی توں ماخوذ ہے ، لیکن پرانی فارسی دے الٹ سجے توں کھبے لکھی جاندی سی ۔ ساسانیاں دے دور وچّ پنجویں صدی عیسری اردشیر بابکان نے اوستائی برلی نوں زندہ کرن دی کوشش کیتی سی ۔ اس لئی یقین کیتا جا سکدا ہے دے امتداد زمانہ نال اس وچّ تبدیلیاں واقع ہوئیاں ہوئیے گئیاں ۔ اوستا دے اندر گھاٹا دا حصہ ہے ، اوہ دوسریاں توں وکھ ہے اتے اس دی بھاشا وی پراچین لگدی ہے ۔ استوں وی بھاشا وچّ تبدیلی دا ثبوت ملدا ہے ۔ اگر غور کیتا جاوے تاں گاتھائی بولی دی زبان نوں سبھ توں پرانی اتے مادی بولی نوں اس توں نکلی سمجھاجائے گا ۔

اوستا زبان کی مشابہت ویدک زبان سے ہے۔ اوستا میں قدیم فارسی سے زائد حروف ہیں۔ اس میں بے رنگ حروف علت کے علاوہ دوہرے حروف علت ’ااے‘ وغیرہ اور بہت سے حروف صیح مثلاً تین قسم کی ’ش‘ اور تین قسم کی ’ز‘ وغیرہ پائی گئی ہیں۔ حروف علت ’اِ، اُ‘ کا اندراج اوستا میں نہایت نمایاں ہے۔ مثلاً ’بَوَاِتِ‘ (ہوتاہے)۔ قدیم ہندآریائی ’بَھَوتِ‘ (ہوتا ہے)۔ دااُرُ‘ (لکڑی) قدیم ہند آریائی ’دارُ‘ لکڑی۔ لیکن قدیم فارسی میں اس کی عدم موجودگی تھی۔

اوستا میں سور بھکتی کا استعمال کثیر ہوتا ہے۔ مثلاً اوستا میں ’ارَدِم‘ (نصف) اور سنکرت میں ’اردھم‘ (آدھا حصہ)۔ اوستا میں ’ورسو‘ اور سنسکرت میں ’ول ش‘ (بال) لیکن قدیم فارسی میں سور بھکتی کا استعمال شاذ نادر ہی ہوتا تھا۔

قدیم فارسی میں ہندیورپی کی ’ر + ت‘ برقرار رہی لیکن اوستامیں اس کی ’ش‘ ہوگئی ہے۔ مثلاً

ہند آریائی قدیم فارسی اوستا معنی
مرتیہ مرت یہ مشیہ آدمی

اوستا میں حالت میں ظرفی کافی نمایاں ہے۔ قدیم فارسی میں اس کی عدم موجودگی ہے اور اس کے بجائے حالت اضافی مستعمل ہوتی ہے۔ قدیم فارسی میں تمام فعلوں سے پہلے حروف زائد ’اَ‘ لگایا جاتا ہے۔ جیسے ’اَبرم‘ (میں نے اٹھایا)۔ لیکن اوستا میں صرف بیس ماضی کے الفاظ سے پہلے زائد حروف لگایا جاتا تھا۔

قدیم فارسی[لکھو]

پرانی فارسی اس ویلے دی فوجی اتے شاہی زبان دی حیثیت رکھدی سی اتے عامَ بولی وچ پرانی فرنس کہاؤندی سی ۔ یعنی ہخامنشی بادشاہاں دی سرکاری بولی پرانی فارسی سی اتے اس بولی وچّ ہخامنشی بادشاہاں دے کتبے دستیاب ہوئے ہن ، اوہناں دی لپی میخی سی جو آرامی لپی نوں ماخوذ ہے ۔ مگر ایرانیاں نے اس رسم الخط وچّ ہجا دے بجائے حروف تہجیاستعمال کیتے ہن ۔ اس طرحاں اس دی پیچیدیگیاں دور ہو گئیاں ۔ سنسکرت دی طرحاں پرانی فارسی وی پرانی آریائی توں نکلی ہے اتے اس نال ملدی جلدی ہے ۔

پرانی فارسی دی مشابہت ٹکسالی سنسکرت نال ہے ۔ ٹکسالی سنسکرت دی طرحاں پرانی فارسی وچّ ماضی ادھورا اتے مضارع دے نال وادھو شبد ضرور لگدا سی اتے ٹکسالی سنسکرت دی طرحاں پرانی فارسی انی پرانا نہیں ہے جنی اوستا ہے ۔ قدیم فارسی وچّ حالت ظرفی اتے ماضی تمام غائب ہوچکے سن ۔ مصارع اتے ماضی ناتمام دی تشکیل اک ہو چکی ہی ہو گئی سی ۔

قدیم فارسی اور پراکرت کی باہمی مشابہت[لکھو]

قدیم فارسی اور پراکرت میں باہمی مشابہت تھی۔ مثلاً

(۱) پراکرت کی طرح قدیم فارسی میں لفظ کے آخر میں حروف صیح کا یا تو بالکل حذف ہوگیا تھا یا وہ بالکل کمزور ہوگیا تھا۔
(۲) دونوں میں صیغہ تثنیہ مفقود ہوگیا تھا۔(۳) دونوں میں حالت ظرفی کے بجائے حالت اضافی کا استعمال ہوتاتھا۔
(۴) دونوں حالت ذریعہ جمع کے لاحقہ ’بھس‘ کی تشکیل ہوتی تھیں۔ سنسکرت کی طرح ’آ اِ س‘ کا استعمال نہیں ہوتا تھا۔
(۵) دونوں میں ماضی تمام مفقود ہوگئی تھی۔
(۶) دونوں میں ماضی تمام اور مضارع کی ایک ہی تشکیل بن گئی تھی۔ 
        
== پہلوی ==

وچکارلی فارسی جاں پہلوی اس بولی نوں کہندے ہن جو پارتھی تے ساسانی ویلے ( 226ء؁ توں 642ء؁ ) تکّ ایران وچّ بولی جاندی سی اس نوں کتابی پہلوی وی کہندے ہن ۔

ہخامنشی سلطنت دے زوال دے بعد یونانیاں دا ایران اتے قبضہ ہو گیا سی ، اتے سیاسی غلبے دے نال یونانی رہتل دا ایران تے اثر پیا ۔ یونانیاں دے راج ویلے وچّ ہی اشکانیاں نے سیاسی بڑھت حاصل کیتی ۔ اوہناں دے ویلے وچّ اک دوجی بولی وجود آئی ۔ ایہہ ہخامنشی راج ویلے دی پرانی فرنس توں نکلی سی ، مگر اس اتے دوجی بولیاں دے ڈونگھے اثرات پائے جاندے ہن ۔ مجودہ فارسی وی اس پہلوی توں نکلی ہے ۔ اس لئی اسنوں وچکارلی فارسی (میانہ فارسی) یعنی پرانی فارسی(قدیم فارسی) اتے فارسی دے وچّ دی بولی وی کہندے ہن ۔ ایہہ بولی ساسانی راج ویلے تک قایم رہی ، سگوں ایہ ایسے ویلے وچّ بلندی اتے پہنچی ۔ اس زمانے دے سارے سکے اتے کتاباں اس بولی وچّ لکھیاں نیں ۔ پہلوی لپی آرامی توں سوتر(ماخوذ ) ہے اتے سجے توں کھبے پاسے لکھیا جاندا ہے ۔ اس دی اک خاص شکل جسنوں زوادش کہندے سن ۔ اس طرحاں اس دی تحریراں وچّ آرامی شبد لکھدے سن اتے اس دے صحیح تلفظ ادا کرن دے بجائے اسدے ہم معنی پہلوی شبد پڑے جاندے سن ۔ اداہرن لئی " ملک " لکھدے سن اتے اس نوں شاہ پڑھدے سی ۔ لیکن ایہہ سخت مشکل سی اتے اس نوں پڑھن لئی اک ہزار علامتاں توں جان-پچھان ضروری سی ۔

پہلوی کی نمایاں خصوصیتیں[لکھو]

(۱) قدیم ایرانی الفاظ کے آخری رکنوں (حروف علت یا حروف علت + حروف صیح) کا حذف۔ مثلاً وسطی فارسی ’سبد‘ قدیم ایرانی ’ستم‘ (سو)، وسطی فارسی ’ویست‘ اوستا ’وی سیَ ت‘ (بیس)۔

(۲) سوائے فعل کے حال کے تمام فعلی تشکیلوں کا ترک اور ان کی جگہ پھیرپھار کی طرز کلام کا استعمال۔ (۳) فعل مجہول کی تشکیل کی توسیع۔

(۴) اوستا اور قدیم فارسی میں ’ل‘ کی بالکل عدم موجودگی تھی۔ وسطی فارسی میں بھی ’ل‘ کی کوئی واضح علامت نہیں ملتی ہے۔

== وسطی فارسی کی بولیاں ==

وسطی فارسی کی قابل ذکر بولیاں پارتھی، سوغدی،سکائی اور سغدی تھیں۔

=== پارتھی ===

یہ شمالی مغربی ایرانی بولیوں میں تھی۔ لہذا معیاری وسطی فارسی سے جو درحقیقت ایک جنوبی بولی تھی سے بہت کچھ مختلف تھی۔ اس کی خصوصیتوں کا اندازا مندرجہ ذیل حروف لاحقوں کی فہرست سے لگایاجاسکتا ہے۔

پارتھی معیاری فارسی
ز و
س ہ
منترع لاحقہ ’ایفت‘ ایھ
مصدر ’کر‘ (کرنا) مصدر ’کن‘ (کرنا)
واچ (بولنا) گود (بولنا)

سوغدی[لکھو]

(چغدی) یہ ایران کے شمال مغرب میں بولی جاتی تھی۔ اس میں بدھ، عیسائی اور مانی مذہب (خاص کر بدھ مذہب کی) متعدد تصانیف برآمد ہوئی تھیں۔ اس کی خصوصیت کا اندازا مندرجہ ذیل تقابلی حروف سے لگایا جاسکتا ہے۔

سرنامے کا متن سرنامے کا متن
چغدی معیاری فارسی
خ ہ
ش تھ + ر
د + ب ر + و
ت + ف تھ +و
ی ہ + ی = یہ آخری نوعیت عہد حاضر کی یغنوبی زبان میں بھی پائی جاتی ہے۔

سکائی[لکھو]

اس میں براہمی رسم الخط میں متعدد بدھ مذہب کی کتابیں برآمد ہوئیں ہیں۔ اس بولی کی دریافت سے مغربی بولیوں کی خصوصیتوں پر بہت روشنی ڈالی گئی ہے اور یہ ظاہر ہوگیا ہے کہ جنوب مغربی فارسی بولیاں شمالی بولیوں سے بہت جدا ہیں اور بلوچی اور کردی درحقیقت شمالی ایرانی بولیاں ہیں۔ سکائی کے الفاظ کے خزانہ الفاظ سے اور بھی ثابت ہوگیا ہے کہ مشرقی اور مغربی ایرانی بولیوں میں کتنا اختلاف ہے۔ اگرچہ معیاری فارسی میں رسمی حالت کے تمام لاحقہ مفقود ہوگئے تھے، لیکن سوغدی اور سکائی میں چھ حالتیں محفوظ رہیں۔ مثلاً حالت مفعولی میں لاحقہ ’ا‘ بجائے ’ام‘ حالت ذریعہ سوغدی لاحقہ ’اَ‘ (جو قدیم فارسی میں بھی تھا) حالت مقامی میں سکائی لاحقہ ’آ‘ جو ’ایا‘ سے مشتق تھا۔

سغدی[لکھو]

ترخان میں بعض اوراق ایک اور زبان کے ملے ہیں جسے سغدی زبان قرار دیا گیا ہے۔ یہ ہند سکاتی یا سکاتی گروہ سے تعلق رکھتی ہے۔ جو مشرقی ایرانی زبانیں کہلاتی ہیں جن کی نمائندگی افغانی زبان اور سطح پامیر کی بعض زبانیں (میری، قولی اور دخی وغیرہ) کرتی ہیں۔

== عہد حاضر کی زبانیں ==

عہد حاضر کی ایرانی زبانوں کی مندرجہ خصوصیتیں ہیں۔

(۱) ان زبانوں کی تذکیر وتانیث (اپنے لاحقوں کے ساتھ) بالکل مفقود ہوچکے ہیں۔ اکثر تذکیر و تانیث کو ظاہر کرنے کا منشا ہو تو مذکر کے لئے ’مرد‘ یا ’نر‘ اور مونث کے لئے ’مادہ‘ یا ’زن‘ اسم کے ساتھ لگایا جاتا ہے۔ 
(۲) صرف و نحوی بتدریح تبدیلی حروف علت جو قدیم ایرانی میں بہت نمایاں تھی۔ اب چند اقسام کی زیادہ تر فعل لازم و معتدی کے اختلاف کے جتلانے میں مستعل ہوتی ہے۔ مثلاً بلوچی ’سچگ‘ (جلنا)، لیکن ’سوجگ‘ (جلانا)۔ اس طرح کی تبدیلی حروف علت میں عہد حاضر کی ہند آریائی میں فعل لازم و معتدی کے اختلاف جتلانے کے لئے برقرار رہے ہیں۔ مثلاً ’مڑنا، موڑنا‘ ’پھرنا، پیھرنا‘
(۳) اسم کی گردان کی صرف دوحالتیں رہ گئیں ہیں۔ ایک فاعلی اور دوسری فعلی۔
(۴) مغربی ایرانی میں ماضی ناتمام اور فعل تمنائی مفقود ہوچکے ہیں۔ مگر مشرقی زبان یغنوبی میں ماضی ناتمام اور فعل تمنائی اب تک برقرار ہیں۔
== گروہ بندی ==

عہد حاضر کی ایرانی زبانوں میں حسب ذیل زبانیں شامل ہیں۔

(۱) ادبی فارسی۔
(۲) بحیرہ خزر کے گرد ونواح کی زبانیں۔
(۳) کردی۔

(۴) متوسط ایران کی زبانیں۔

(۵) بختیاری۔
(۶) بدخشانی و مدگلشتی۔
(۷) یغنوبی۔
(۸) غلچا زبانیں۔
(۹) برصغیر کی ایرانی زبانیں۔
== ادبی فارسی ==

عہد حاضر کی ادبی فارسی کی مندرجہ ذیل خصوصیتیں ہیں۔

(۱) اس میں کثیر الاجزا الفاظ کے ابتدائی ’ا‘ حذف ہوگیا ہے۔ مثلاً 
اوستا پہلوی ادبی فارسی معنی
اپرنایُو اَپُرنائی برنا نوجوان
(۲) ہندوستان کی طرح حرف صیح کے حذف ہونے پر سابق علت کے عوض لمبائی ہوجاتی ہے۔ مثلاً 
قدیم فارسی ادبی فارسی معنی
پنج سَت پانصد پانچ سو
تن تَھر تار اندھیرا
چشِ چیہ چیز چیز
   (۳) لفظ کے ابتدا میں اگر مرکب حروف صیح ہوں تو عہد حاضر کی فارسی میں ایک انضامی حروف علت کے شروع میں لگایاجاتا ہے۔ مثلاً 
پہلوی ادبی فارسی معنی
سپید اسپید سفید
ستون اُستون تھم
(۳) اوستا و پہلوی کے ’و‘ کی ’ب‘ ہوگیا۔ مثلاً
اوستا پہلوی ادبی فارسی معنی
وار واران باران بارش
(۴) ہند یورپی ’پ‘ کا لفظ کے درمیان یا آخر میں ’ب‘ ہوگیا۔ مثلاً 

|- ! اوستا !! قدیم فارسی !! ادبی فارسی |- | پَدَ (پاؤں) || نی پدی (پاؤں کے پیچھے چلنے والا) || پے (پاؤں)

(۵) اس میں قدیم فارسی کے ’د‘ کے ابتدا میں اب تک موجود ہے۔ جب کہ اس کے بالمقا بل ’ز‘ تھی۔ مثلاً 
اوستا پہلوی ادبی فارسی
زاماتر دامات داماد
زانستا(تم جانتے ہو) دانش (جانتا) داندا (وہ جانتا ہے)
(۶) حروف علت کے درمیان قدیمایرانی کے ’ک‘ کا ’گ‘ ہوگیا ہے۔ مثلاً ۱وستا ’اگست‘ (اس نے دیکھا)، پہلوی ’اکاش‘ (واقف)، ادبی فارسی ’اگا‘
   (۷) قدیم ایرانی کی ابتدائی ’ی‘ کی ’ج‘ ہوگئی ہے۔ مشلا
اوستا ادبی فارسی معنی
یام جام پیالہ
یَسن جشن تہوار

یہ تبدیلی ہند آریائی میں بھی واقع ہوئی ہے مثلاً رگ وید میں جمنا (دریا) یمنا آیا ہے۔

(۸) قدیم ایرانی کے ’ر + د‘ کی ’ل‘ ہوگئی ہے۔ مثلاً
اوستا ادبی فارسی معنی
سَرَدَ سال سال
زرَد دل دل
  • بحیرہ خزر کے گرد ونواح کی زبانیں

بحیرہ خزر کے گردنواح میں مندرجہ بولیاں بولی جاتی ہیں۔(۱) مازندرانی (۲) گینگی (۳) تالی (۴) سمنانی۔ ان میں تالی اور تات روس کے علاقے میں بولی جاتی ہے۔ تات باکو اور اس کے گرد نواح میں اور تالی جنوب کے علاقے میں۔ ان بولیوں میں صوتی حذف (اختصار) بہت پایا جاتا ہے۔ مثلاً ادبی فارسی میں ’شب‘ (رات) کے بالمقابل ماذندرانی اور تات ’شعوُ‘ اور سمنانی ’شو‘ بولتے ہیں۔

==== کردی ====

کردی زبان کردستان کے علاقہ میں بولی جاتی ہے۔ جو ترکی، ایران اور عراق میں مستقیم ہے۔ اس میں دو قسم کی ’و‘ مروج ہیں۔ ایک نیم صوتی اور دوسری لب و دندانی۔ مثلاً ’دُو‘ جس میں ’و‘ نیم صوتی ہے۔ لیکن ’آؤ‘ (پانی) جس میں لب د دندانی ہے۔ اس زبان میں ’س‘ کے علاوہ عربی ’ص‘ کی طرح ’ص‘ بولی جاتی ہے۔ مثلاً ’صَاحِب‘


متوسط ایران کی زبانیں[لکھو]

متووسط ایران کی زبانیں گبری، کاشانی، نائن اور سیوند ہیں۔گبری ایران کے پارسیوں کے زبان ہے اس کو زری بھی کہتے ہیں۔ ان زبانوں میں قدیم ایرانی ’ت‘ کی ’ی‘ ہوگئی ہے۔ مثلاً

اوستا ادبی فارسی کاشانی معنی
گتَ گد ک یا گھر

گبری میں اس ’ت‘ کی ’ز‘ ہوگئی ہے۔ مثلاً گبری ’میں کز اے شئے‘ (میں گھر جارہاہوں) تعجب ہے گبری میں اردو کے ’میں‘ کی طرح ’میں‘ استعمال ہوتاہے۔ ان زبانوں میں قدیم ایرانی کی ’و‘ اب تک برقرار رہے۔ جب کہ دیگر ایرانی زبانوں میں اس کی جگہ ’ب‘ استعمال کیا جارہا ہے۔ مثلاً

ادبی فارسی کاشانی گبری معنی
بار ووئی راو ہوا
===بختیاری===

ایران کے جنوب میں بختیاری قبیلہ بولتا ہے۔ اس میں ادبی فارسی کے ’خ‘ کے بالمقابل ’ہ‘ بولی جاتی ہے۔ مثلاً

بختیاری ادبی فارسی معنی
ہور خار کانٹا
   اس میں ادبی فارسی کے ’اے‘ کے بالمقابل ’ای‘ بولی جاتی ہے مثلاً
بختیاری ادبی فارسی معنی
دِیَو دیو بھوت
مِیش نلش بھیڑ
بیدن بُودن ہونا
دیر دو‘ر دور
===بدخشانی و مدگلشتی===

بدخشانی اافغانستان کے شمال میں بدخشاں اور مدگلشتی چترال کے ایک علاقے میں بولی جاتی ہے۔ یہ دونوں بولیاں ایک دوسرے سے بہت مشابہ ہیں۔ ان کے حروف علت میں کوئی نمایاں اختلاف نہین ہے۔ حروف صیح میں بدخشانی میں ’ف‘ اور مدگلشتی میں اس کے بجائے ’پ‘ بولاجاتا ہے۔ مثلاً

بدخشانی مدگلشتی ادبی فارسی
فلُوت پوت فولاد

بدخشانی کے ’خ‘ کے بالمقابل مدگلشتی میں ’غ‘ بولا جاتا ہے۔ مثلاً

بدخشانی مدگلشتی ادبی فارسی
بوخ بوغ باغ

ان دونوں بولیوں میں مصدر کا لاحقہ ’ای ون‘ ہے مثلاً

بدخشانی مدگلشتی ادبی فارسی معنی
شموریدن شمرودن گننا
===یغنوبی===

یہ زبان روس کے علاقے سمرقند میں بولی جاتی ہے اور قدیم مشرقی ایرانی زبانوں کی تحقیقات کے لئے نہایت اہم ہے۔ اس زبان میں ہند یورپی ابتدائی ’کھ‘ حذف ہوگیا ہے۔ مثلاً

سنسکرت فارسی یغنوبی
کھر خر ارد

اس زبان میں ہند یورپی ’بھ‘ کی و ہوگئی ہے۔ مثلاً

سنسکرت فارسی یغنوبی معنی
بھراتا برادر وروت (مشرقی) وردت (مغربی) بھائی

اگرچہ یغنوبی زبان کا تعلق وسطی ایرانی کی سوغدی سے قریبی تعلق ہے، لیکن یہ سوغدی کی براہ راست جانشین نہیں ہے۔ کیوں کہ سوغدی میں ایرانی ’و + و‘ کی ’و + ب‘ ہوگئی تھی۔ مگر یغنوبی میں یہ برقرار ہے اور ماضی صیغہ جمع غائب کی یغنوبی میں علامت ’ر‘۔ لیکن سوغدی،میں ’انت‘ ہے۔

===غلچا زبانیں===

یہ زبانیں پامیر، چینی ترکستان کی سرحد اور روسی ترکستان کے علاقہ میں بولی جاتی ہیں۔ ان زبانوں میں مندرجہ قابل ذکر ہیں۔ (۱) دخی (۲) شفنی (۳) سریخولی (۴) زیباکی، اشکاشمی ہیں ۔

دخی[لکھو]

یہ زبان چترال کے شمال میں بولی جاتی ہیں۔ اس میں جمع بنانے کے لئے ’اشت‘ کا لاحقہ مستعمل ہے۔ مثلاً ’خُون‘ (گھر) ’خون اشت‘ (جمع) ’روز‘ (میں) ’سک اشت‘ (ہم)

شفنی[لکھو]

یہ زبان دخی کے شمال میں بولی جاتی ہے۔ اس میں جمع کے لئے ’وین‘ کا لاحقہ مستعمل ہے۔ مثلاً ’چید‘ (گھر) ’چیداین‘ ۰جمع)

===سریخولی===

یہ زبان چینی ترکستان کی سرحد اور روسی ترکستان میں بولی جاتی ہے۔ اس زبان میں جمع کے لئے خیل کا لاحقہ استعمال ہوتا ہے، جس کے معنی لشکر کے ہیں۔ مثلاً ’چید‘ (گھر) ’چید خیل‘ (جمع)

===زیباکی اشکاشمی===

یہ زبان دخی کے جنوب میں بولی جاتی ہے۔ اس میں جمع کے لئے ’ائی‘ کا لاحقہ لگایا جاتا ہے۔ مثلاً ’ترتات‘ (باپ) ’دتاتی‘ (جمع)

(۹) برصغیر کی ایرانی زبانیں[لکھو]

برصغیر میں مندرجہ ذیل ایرانی زبانیں بولی جاتی ہیں۔ (۱) پشتو (۲) ارورمڑی (۳) بلوچی

====پشتو===

پشتو سرحد اور شمالی بلوچستان میں کثیر تعداد لوگ پشتو بولتے ہیں۔ لیکن افغانشتان میں نصف سے کم لوگ بولتے ہیں۔ ہندوستانی زبانوں کے ساتھ نزدیکی تعلق ہونے کی وجہ سے اس زبان میں کوزی حروف بھی مروج ہیں۔ اس میں ایرانی الفاظ کی اندرونی ’د‘ کی ’ل‘ ہوگئی ہے۔ مثلاً

اوستا سنسکرت پشتو معنی
پَدَ پَد پَل پاؤں

اس زبان میں حالت اضافی میں سابقہ ’دا‘ مستعمل ہے مثلاً ’ٹری‘ (آدمی) لیکن ’داسٹری‘۔ بلوچستانی پشتو میں ’ف اور ہ‘ شاز و نادر بولی جاتی ہے۔ پشتو میں حنکی حروف کا مظہر نہایت پیچیدہ ہے اور اس میں فعل کا استعمال بھی پیچیدہ ہے۔

ارمڑی[لکھو]

(۱) ارمڑی میں حروف تعریف بھی مروج ہیں، جو آریائی زبانوں میں ایک غیر معمولی مظہر ہے، یہ حروف تعریف ’ا‘ جو بطور سابقہ لفظ کے پہلے لگایاجاتا ہے، مثلاً ’آسڑئی‘ 

(۲) جمع بنانے کے لئے ’ای‘ یا ’انی‘ کا لاحقہ لگایا جاتا ہے۔ مثلاً

’شور‘ (شہر) جمع ’شیری‘
’آدمی‘ (آدمی) جمع ’آدم پنی‘
’ہائی‘ (ہاتھی) جمع ’ہات پنی‘
(۳) مختلف اسمی حالتوں کو جتلانے کے لئے سابقے لگائے جاتے ہیں۔ مثلاً
                   حالت اضافی ’ات سڑئی‘ (آدمی)

حالت ذریعہ ’پ سڑئی‘ (آدمی سے)

                   حالت مقامی ’اسڑئی‘ (آدمی پر)

بلوچی[لکھو]

بلوچی بلوچستان میں بولی جاتی ہے۔ اس میں دو بولیاں ہیں ایک مغری اور دوسری مشرقی اور ان بولیوں میں بڑا اختلاف ہے۔ تاہم ان بولیوں کے بولنے والے ایک دوسرے کی بولی کو سمجھ لیتے ہیں۔ مشرقی بلوچی میں ابتدائی بندیشی حروف ’ک، پ، ت، ٹ‘ ایک خاص دھماکے سے بولے جاتے ہیں۔ یہ ہندوستانی بندشی حروف سے بہت الگ ہیں۔ مندرجہ الفاظ سے مشرقی اور مشرقی بلوچی میں فرق ظاہر ہوگا۔

مشرقی بلوچی مغڑبی بلوچی معنی
ہش اَچ سے
اَف اپ پانی
برادر برابر برابر
پھاو پاو پاؤں

ہور ویکھو[لکھو]

حوالے[لکھو]

باہرلے جوڑ[لکھو]