تبلیغی جماعت

وکیپیڈیا توں
Jump to navigation Jump to search
تبلیغی جماعت
بنگلہ والی مسجد (مرکز تبلیغی جماعت)
بانی
مولانا محمد الیاس کاندھلویسانچہ:رح
اہم آبادی والے علاقے
 بنگلہ دیش
 بھارت
 پاکستان
 برطانیہ
Flag of Indonesia.svg انڈونیشیا
 ملائشیا
 دکھنی افریقہ
 امریکہ
Flag of Sri Lanka.svg سری لنکا
 فرانس
مذاہب
اسلام
کتاباں
فضائل اعمال
زباناں
مذہبی: عربی
بنگلہ دیش وچ: بنگالی
بھارت تے پاکستان وچ:اردو
ہور ملکاں وچ: برطانیہ وچ: علاقائی زباناں
ملائیشیا وچ 2009ء وچ تبلیغی اجتماع دا اک منظر

محمد الیاس کاندھلوی دی قائم کردہ اک اسلامی اصلاحی تحریک جو 1926ء وچ قائم کیتی گئی۔ بنیادی طور اُپر فقہ حنفی دے دیوبندی مکتب فکر نال تعلق رکھتی ہے۔ ایہ برصغیر پاک و ہند دے علاوہ ہور کئی ملکاں وچ وی سرگرم ہے۔

تبلیغی جماعت دے اصول[لکھو]

تبلیغی جماعت دے اصول: (انہاں نوں چھ گلاں، چھ صفات تے چھ نمبر وی کہیا جاندا ہے)

  1. ایمان
  2. نماز
  3. علم و ذکر
  4. اکرام مسلم
  5. اخلاص نیت
  6. دعوت و تبلیغ

جماعت[لکھو]

جماعت اس تحریک دی اک مخصوص اصطلاح ہے جو اس وقت استعمال کیتی جاندی ہے جدوں کئی افراد اک مخصوص مدّت لئی دین سیکھن تے سکھان دی خاطر کسے گروہ دی شکل وچ کسے جگہ دا سفر کردے نیں انہاں دے دورے دی مدّت تن دن، چالی دن، چار مہینے تے اک سال تک ہو سکدی ہے۔ ایہ افراد اس دوران علاقے دی مسجد وچ قیام کردے نیں۔

گشت[لکھو]

کسے وی جگہ دے دورے وچ اپنے قیام دے دوران ایہ افراد گروہ دی شکل وچ علاقے دا دورہ کردے تے عام افراد خصوصاً دکاندار حضرات نوں دین سیکھن دی دعوت دیندے ہوئے مسجد وچ مدعو کریا کردے نیں۔ اس عمل نوں جماعت دی اصطلاح وچ 'گشت' کہیا جاندا ہے۔

تعلیم[لکھو]

عموماً چاشت دے وقت تے ظہر دی نماز دے بعد مسجد وچ تبلیغی جماعت نال وابستہ افراد اک کونے وچ اکٹھے ہوجاندے نیں تے کو‎ئی اک فرد فضا‎ئل اعمال دا مناسب آواز وچ مطالعہ کردا ہے تاہم اس امر دا خاص خیال رکھیا جاندا ہے کہ نماز و تلاوت وچ مشغول افراد دے انہماک وچ خلل نہ پوے۔

فضائل اعمال دی تعلیم دا مقصد: اس كتاب دی تعلیم دے مندرجہ ذیل مقاصد نیں۔ ۱۔ فضائل سن سن کر اعمال کا شوق پیدا ہو جائے۔ ۲۔ علم اور عمل میں جوڑ پیدا ہو جائے۔ ۳۔ مال سے ہٹ کر اعمال پر یقین بن جائے۔ ۴۔ سب کے دل قرآن و حدیث سے اثر لینے والے بن جائیں۔

فضا‎ئل اعمال[لکھو]

دوسری تنظیموں کی طرح تبلیغی جماعت کے ساتھیوں کے لیے قرآن پاک کی تلاوت کے ساتھ ساتھ اعمال کے فضائل سے متعلق ایک کتاب کا مطالعہ کرایا جاتا ہے۔ اس مجموعہ کو بھی کتابی شکل میں مرتب کیا گیا ہے جو فضا‎ئل اعمال کے نام سے موسوم ہے۔ اس کتاب کا مطالعہ جماعتوں میں چلتے ہوئے اور مقامی مسجد میں تسلسل سے کرایا جاتا ہے۔ اور اس كى علاوہ منتخب احادیث مؤلف محمد يوسف كاندھلوی صاحب كا بھی مطالعہ كيا جاتا ہے۔

سالانہ عالمی اجتماعات[لکھو]

رائے ونڈ اجتماع[لکھو]

عام طور پر اکتوبر کے مہینے میں لاہور کے قریب را‎ئے ونڈ میں تین روزہ سالانہ اجتماع کا انعقاد کیا جاتا ہے جس میں نہ صرف پاکستان بلکہ دنیا بھر سے لاکھوں افراد شرکت کرتے ہیں۔ اس موقع پر یہاں ایک عارضی شہر آباد ہو جاتا ہے۔

بنگلہ دیش اجتماع[لکھو]

یہ بھی عام طور پر سال کے آخر میں منعقد ہوتا ہے۔ یہ مختلف شہروں میں کئی دنوں تک جاری رہتا ہے۔ اس اجتماع میں پورا بنگلہ دیش امڈ پڑتا ہے۔ جس کی وجہ سے اس اجتماع کو صرف ڈھاکہ میں انعقاد کے بجائے بنگلہ دیش کے کئی شہروں میں منعقد کیا جاتا ہے۔ کچھ سال قبل یہ صرف ڈھاکہ میں ہی منعقد ہوتا تھا۔

بھوپال اجتماع[لکھو]

یہ بھی سال کے آخر ماہ دسمبر میں منعقد ہوتا ہے جس میں ہند و بیرون ہند سے لاکھوں افراد شرکت کرتے ہیں۔ یہ اجتماع کئی سال قبل بھوپال کی مشہور مسجد تاج المساجد میں منعقد ہوتا تھا لیکن جگہ ناکافی ہونے کی بنا پر اسے شہر کے مضافات میں واقع ایٹ کھیڑی نامی جگہ میں منتقل کردیا گیا۔ اب اس اجتماع کا انعقاد تسلسل کے ساتھ اسی جگہ ہوتا ہے۔

مراکز تبلیغی جماعت[لکھو]

بھارت[لکھو]

بنگلہ والی مسجد تبلیغی جماعت کا اولین مرکز ہے۔ یہ مسجد دہلی میں بستی نظام الدین اولیاء میں واقع ہے۔

پاکستان[لکھو]

رائے ونڈ

پاکستان میں تبلیغی جماعت کا مرکز یہیں واقع ہے۔

مدنی مسجد

کراچی کے علاقے فیڈرل بی ایریا میں واقع مدنی مسجد کراچی میں تبلیغی جماعت کا سب سے بڑا مرکز ہے جہاں ہر جمعرات کو بعد نماز مغرب کراچی کی سطح پر اجتماع ہوتا ہے جس مین اہلسنت کے جید علمائے کرام وعظ کرتے ہیں۔ عوام کی ایک کثیر تعداد اس محفل میں شریک ہوتی ہے۔

اوہ شہر جتھے مراکز قائم نیں[لکھو]

سکھر، شکارپور، حیدرآباد، کوہاٹ، مردان ، ہری پور، راولپنڈی، میرپور، گلگت، تورورسک، لکی مروت، لاہور، گجرانوالہ، چنیوٹ، فیصل آباد، ملتان، کوئٹہحوالےدی لوڑ؟

امارت[لکھو]

تبلیغی جماعت میں کئی دہائیوں تک نظام امارت موجود رہا۔ امیر کو میوات کے افراد حضرت جی کہا کرتے تھے، پھر یہی لقب امیر تبلیغی جماعت کے لیے چل پڑا۔ اس میں تین امراء (حضرت جی) ہوئے ہیں:

  1. محمد الیاس کاندھلوی
  2. محمد یوسف کاندھلوی
  3. انعام الحسن کاندھلوی

شورائی نظام[لکھو]

انعام الحسن کاندھلوی کی وفات (1995ء) کے بعد بھارت کے نامور علماء کرام نے متفقہ طور پر مولانا زبیر الحسن کاندھلوی کو امیر منتخب کرلیا، لیکن میوات والے مولانا محمد سعد کاندھلوی کی امارت پر اصرار کرتے رہے۔ یہ صورتحال دیکھ کر علماء نے نظام امارت کو تحلیل کرکے شورائی نظام بنایا جس میں بھارت سے مولانا محمد سعد کاندھلوی اور مولانا زبیر الحسن کاندھلوی اور پاکستان سے عبد الوہاب صاحب کو منتخب کیا گیا۔ اس طرح تبلیغی جماعت میں شورائی نظام کی ابتدا ہوئی۔ اس کے بعد سے تبلیغ کے وفود (جماعتوں) میں جو امیر بنائے جاتے ہیں ان کو بھی امیر کے بجائے ذمہ دار کہا جاتا ہے۔

بیرونی جوڑ[لکھو]

سانچہ:تبلیغی جماعت

سانچہ:اسلامی رجحانات