عرش صدیقی

آزاد انسائیکلوپیڈیا، وکیپیڈیا توں
Jump to navigation Jump to search
عرش صدیقی
معلومات شخصیت
جم 21 جنوری 1927  ویکی ڈیٹا اُتے (P569) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
گورداسپور،  پنجاب  ویکی ڈیٹا اُتے (P19) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
وفات 8 اپریل 1997 (70 سال)  ویکی ڈیٹا اُتے (P570) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
ملتان،  پاکستان  ویکی ڈیٹا اُتے (P20) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا اُتے (P27) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
عملی زندگی
مادر علمی گورنمنٹ کالج لہور  ویکی ڈیٹا اُتے (P69) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
تعلیمی اسناد ماسٹر آف آرٹس  ویکی ڈیٹا اُتے (P512) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
پیشہ شاعر،  افسانہ نگار،  پروفیسر،  ادبی تنقید نگار  ویکی ڈیٹا اُتے (P106) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
پیشہ ورانہ زبان اردو،  انگریزی  ویکی ڈیٹا اُتے (P1412) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
شعبۂ عمل غزل،  نظم،  افسانہ،  ادبی تنقید  ویکی ڈیٹا اُتے (P101) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
ملازمت بہاؤدین زکریا یونیورسٹی  ویکی ڈیٹا اُتے (P108) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
اعزازات
آدم جی ادبی انعام  ویکی ڈیٹا اُتے (P166) د‏‏ی خاصیت وچ تبدیلی کرن
P literature.svg باب ادب

ڈاکٹر عرش صدیقی (پیدائش: 21 جنوری،1927ء - وفات: 8 اپریل، 1997ء) پاکستان نال تعلق رکھنے والے ممتاز شاعر، افسانہ نگار، نقاد تے معلم سن ۔ انہاں دا افسانوی مجموعہ باہر کفن سے پاؤں ادبی دنیا وچ کافی شہرت رکھدا اے جس اُتے انہاں نو‏ں اُتے آدم جی ادبی انعام تو‏ں نوازیا گیا۔

حالات زندگی[لکھو]

ڈاکٹر عرش صدیقی 21 جنوری،1927ء نو‏‏ں گرداسپور، برطانوی ہندوستان وچ پیدا ہوئے۔ انہاں دا اصل ناں ارشاد الرحمٰن سی۔[۱][۲] انہاں نے گورنمنٹ کالج لاہور تو‏ں اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے دے بعد تدریس دے شعبے نو‏‏ں اختیار کيتا۔ اوہ بہاؤالدین زکریا یونیورسٹی ملتان دے شعبہ انگریزی دے پہلے چیئرمین سن ۔[۱]

لکھتاں[لکھو]

عرش صدیقی دا شمار اردو دے اہ‏م افسانہ نگاراں، شاعراں تے نقاداں وچ ہُندا ا‏‏ے۔ انہاں دیاں لکھتاں وچ افسانوی مجموعے

  1. باہر کفن سے پاؤں
  2. عرش صدیقی کے سات مسترد افسانے

اور شعری مجموعوں میں

  1. دیدۂ یعقوب،
  2. محبت لفظ تھا میرا،
  3. ہر موج ہوا تیز،
  4. کالی رات دے گھنگرو
  5. کملی میں بارات

شامل ہیں۔ جبکہ تنقیدی مضامین کے مجموعے

  1. تکوین،
  2. محاکمات
  3. طارتقا

اشاعت پزیر ہو چکے نيں۔[۱] اس دے علاوہ محمد حنیف د‏‏ی مرتب کردہ

نمونہ کلام[لکھو]

نظم

اسے کہنا دسمبر آ گیا ہے

دسمبر کے گزرتے ہی برس اک اور ماضی کی گپھا میں ڈوب جائے گا

اسے کہنا دسمبر لوٹ آئے گا

مگر جو خون سو جائے گا جسموں میں نہ جائے گا

اسے کہنا ہوائیں سرد ہیں اور زندگی کے کہرے دیواروں میں لرزاں ہیں

اسے کہنا شگوفے ٹہنیوں میں سو رہے ہیں

اور ان پر برف کی چادر بچھی ہے

اسے کہنا اگر سورج نہ نکلے گا

تو کیسے برف پگھلے گی


ا

غزل

زنجیر سے اٹھتی ہے صدا سہمی ہوئی سی جاری ہے ابھی گردشِ پا سہمی ہوئی سی
دل ٹوٹ تو جاتا ہے پہ گریہ نہیں کرتا کیا ڈر ہے کہ رہتی ہے وفا سہمی ہوئی سی
اٹھ جائے نظر بھول کے گر جانبِ افلاک ہونٹوں سے نکلتی ہے دیاسہمی ہوئی سی
ہاں ہنس لو رفیقو کبھی دیکھی نہیں تم نےنمناک نگاہوں میں حیا سہمی ہوئی سی
ہر لقمے میں کھٹکتا ہے کہیں یہ بھی نہ چھن جائے معدے میں اترتی ہے غذا سہمی ہوئی سی
اٹھتی تو ہے سو بار پہ مجھ تک نہیں آتی اس شہر میں چلتی ہے ہوا سہمی ہوئی سی
ہے عرش وہاں آج تک محیط ایک خموشی جس راہ سے گذرتی تھی قضا سہمی ہوئی سی

غزل

زنجیر سے اٹھتی ہے صدا سہمی ہوئی سی جاری ہے ابھی گردشِ پا سہمی ہوئی سی
دل ٹوٹ تو جاتا ہے پہ گریہ نہیں کرتا کیا ڈر ہے کہ رہتی ہے وفا سہمی ہوئی سی
اٹھ جائے نظر بھول کے گر جانبِ افلاک ہونٹوں سے نکلتی ہے دیاسہمی ہوئی سی
ہاں ہنس لو رفیقو کبھی دیکھی نہیں تم نے نمناک نگاہوں میں حیا سہمی ہوئی سی
ہر لقمے میں کھٹکتا ہے کہیں یہ بھی نہ چھن جائے معدے میں اترتی ہے غذا سہمی ہوئی سی
اٹھتی تو ہے سو بار پہ مجھ تک نہیں آتی اس شہر میں چلتی ہے ہوا سہمی ہوئی سی
ہے عرش وہاں آج تک محیط ایک خموشی جس راہ سے گذرتی تھی قضا سہمی ہوئی سی

غزل

دروازہ ترے شہر کا وا چاہیے مجھ کوجینا ہے مجھے تازہ ہوا چاہیے مجھ کو
آزار بھی تھے سب سے زیادہ مری جاں پرالطاف بھی اوروں سے سوا چاہیے مجھ کو
وہ گرم ہوائیں ہیں کہ کھلتی نہیں آنکھیںصحرا میں ہوں بادل کی رداچاہئے مجھ کو
لب سی کے مرے تونے دیے فیصلے سارےاک بار تو بے درد سنا چاہیے مجھ کو
سب ختم ہوئے چاہ کے اور خبط کے قصےاب پوچھنے ئے ہو کہ کیا چاہیے مجھ کو
ہاں چھوٹا مرےہاتھ سے اقرار کا دامنہاں جرمِ ضعیفی کی سزا چاہیے مجھ کو
محبوس ہے گنبد میں کبوتر مری جاں کااُڑنے کو فلک بوس فضا چاہیے مجھ کو
میں پیروی اہلِ سیاست نہیں کرتااک راستہ ان سب سے جدا چاہیے مجھ کو
وہ شور تھا محفل میں کہ چلااٹھا واعظاک جام مئے ہوش ربا چاہیے مجھ کو
تقصیر نہیں عرش کوئی سامنے پھر بھیبیتا ہوں تو بینے کی سزا چاہیے مجھ کو


اعزازات[لکھو]

عرش صدیقی نو‏‏ں انہاں دے افسانوی مجموعے باہر کفن سے پاؤں اُتے آدم جی ادبی انعام تو‏ں نوازیا گیا۔[۱]

وفات[لکھو]

ڈاکٹر عرش صدیقی 8 اپریل، 1997ء نو‏‏ں ملتان وچ انتقال کر گئے۔[۱][۱][۲]

حوالے[لکھو]